intresting urdu story teacher aur stoudent | sachi kahani in urdu teacher aur student ki kahani | ٹیچر اور سٹوڈینٹ کی کہانی

 پروفیسر اور سٹوڈینٹ

آج پروفیسر صاحب انتہائی اہم موضوع پر الیکچر دے رہے تھے مجھے اچانک ایک شرارت سوجھی جیسے ہی پروفیسر صاحب نے بورڈ پر لکھنے کے لیےاپنا رُخ  پلٹا میں نے سیٹی بجا دی 

پروفیسر صاحب نے مڑ کر پوچھا کس نے سیٹی بجائی ہے تو کوئی بھی جواب دینے کے لیے آمادہ نہ ہوا پروفیسر صاحب نے اپنی قلم بند کرتے ہوئے کہا میرا لیکچر ختم ہوا وہ کلاس سے جانے لگے میں بہت خوش ہوا کہ ان کو میری شرارت کےبارے میں نہیں ہوا لیکن وہ کہتے ہیں  ناکہ ا ستاد استاد ہوتا ہے

 اسے اپنے شاگرد کے بارے میں علم ہوتا ہے لیکن وہ بعض اوقات خاموش ہوجاتا ہے۔پھر انہوں نے رجسٹر واپس رکھتے ہوئے کہا چلو میں آج آپ کو ایک قصہ سناتا ہوں تا کہ میری کلاس کا وقت پورا ہو جائے کہنے لگے 

میں نے رات کو سونے کی بہت کوشش کی مگر نیند کوسوں دور تھی پھر میں نے سوچا کہ کیوں نہ میں اپنی گاڑی میں پٹرول ڈلوا آتا ہوں واپسی تک کا سونے کا موڈ بن جائے گا اور صبح صبح پٹرول ڈلوانے کی زحمت سے 

                                                                                             بھی بچ جاؤں گا پھر میں نے پٹرول ڈلوا  کر وقت گزاری کے لیے  ادھر اُدھر گھمائی تو میں نے سڑک کے کنارے کھڑی ایک لڑکی کو دیکھا وہ لڑکی جوان اور خوبصورت تو تھی مگر ساتھ ہی بنی سنوری ہوئی بھی لگ رہی تھی

 جیسا کسی پارٹی سے واپس آرہی ہوں میں نے گاڑی اس کے پاس جاکر روکی اور پوچھا کیا میں آپ کو آپ کے گھر چھوڑ دوں؟کہنے لگی اگر آپ ایسا کریں گے تو آپ کی بہت مہربانی ہوگی مجھے رات کے اس وقت کوئی سواری نہیں مل رہی لڑکی اگلی سیٹ پر میرے ساتھ بیٹھ گئی گفتگو انتہائی مہزب اور سلجھی ہوئی کرتی تھی

 جب میں نے اس کے بتائے ہوئے ایڈریس پر اس کے گھر پہنچا تو اس نے اعتراف کرتے ہوئے کہا کہ اس نے مجھ جعسا باشعور اور اچھا انسان نہیں دیکھا اس کے دل میں میرے لیئے پیار پیدا ہو گیا میں نے بھی اسے صاف صاف کہہ دیا کہ آپ بھی مجھے بہت اچھی لگی

 ساتھ ہی میں نے اسے بتایا کہ میں یونیورسٹی میں پروفیسر ہوں اس نے میرا نمبر مانگا میں نے بلا تکلف اسے دے دیا یو نیورسٹی کا سن کر بہت خوش ہوئی اس نے یونیورسٹی کا نام پوچھا جب میں نے بتایا تو کہنے لگی کہ آپ سے گزارش ہےمیں نے کہا حکم کریں

 کہنے لگی میرا بھائی آپ کی یونیورسٹی میں میرا بھائی پڑھتا ہے اس کا خیال رکھیے گا میں نے کہا یہ بھی کوئی بڑی بات ہے آپ اس کا نام بتا دیں وہ کہنے لگی میں آپ کو اس کا نام نہیں بتا سکتی لیکن اس کی ایک نشانی بتا دیتی ہوں

 آپ اسے فورا پہچان جائیں گےمیں نے کہا وہ کون سی نشانی ہے جس سے میں اسے پہچان لوں گا کہنے لگی وہ سیٹیاں مارنا بہت پسند کرتا ہے

 پروفیسر صاحب کا اتنا ہی کہنا تھا کہ کلاس میں موجود ہر لڑکے کی نظر غیر ارادی طور پر مجھ پر پڑ گئی پروفیسر صاحب نے مجھ سے مخاطب ہوتے ہوئے کہا

 اٹھ اوئے جانور تم کیا سمجھتے ہو میں نے یہ پی ایچ ڈی کی ڈگری گھاس کاٹ کر لی ہے اس کے بعد انہوں نے میری خوب ٹھکائی کی اور کلاس سے باہر نکال دیا    


 

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے