Mian jeetne tak haar nahi sakti urdu intresting | story moral story in urdu | اردو سچی کہانی میں جیتنے تک ہار نہیں سکتی

اردو سچی کہانی  میں جیتنے تک ہار نہیں سکتی

شازیہ کھانا بنا ہے یا نہیں ۔۔۔۔۔

شعیب نے آواز دے کر پوچھا ۔۔۔شازیہ کچن میں کھڑی کھانا بنا رہی تھی ۔۔۔۔

بس شعیب 20 منٹ تک کھانا ریڈی یے ۔۔۔آپ فریش ہو جاو ۔۔۔۔شعیب کو بہت بھوک لگی تھی ۔۔۔۔

یار تم کو پتہ بھی ہے مجھ سے بھوک برداشت نہیں ہوتی ۔۔۔پھر بھی ایسا کرتی ہو۔۔۔

شازیہ مسکرانے لگی ۔۔۔میرے کوجے ۔۔۔۔بچے اتنا تنگ کرتے ہیں۔  ان کو سنبھالتے سنبھالتے تھک جاتی ہوں نا۔۔۔۔

اچھا سنو ۔۔۔۔کھانا کھا ۔  بازار تو جائیں ۔۔۔۔مجھے دودھ کا ایک ڈبہ لا دیں ۔۔۔۔

شعیب سر کھجاتے ہوئے بولا ۔۔۔۔

یار شازیہ ۔۔۔۔۔ابھی کتنے  دن پہلے لایا تھا دودھ کا ڈبہ ۔۔۔

ختم بھی ہو گیا۔۔۔۔

شازیہ چاولوں  کو دم پہ لگاتے ہوئے  ۔۔


خدا کا خوف کرو ۔۔۔شعیب ۔۔۔۔12 دن ہو گئے ہیں ۔۔۔۔

دونوں بچے ڈبے والا دودھ ہی پیتے ہیں کھاتے کچھ ہے نہیں ۔۔۔

شعیب ٹی وی آن کرتے ہوئے بولا اچھا اب کھانا دو پہلے پھر جاتا بازار بھی ۔۔۔۔

مغرب کی اذان ہونے لگی ۔۔۔۔

شعیب ۔۔۔۔نے ٹی وی بند کیا ۔۔۔

میں نماز پڑھ لوں اب ۔۔۔۔

شازیہ نے بھی جلدی سے سب کچھ سمیٹا ۔۔۔نماز کے لیئے چلی گئی۔۔۔۔دونوں نے نماز  ادا کی بچے کھیل رہے تھے ۔۔۔۔

شازیہ اور شعیب کو اللہ نے چا بچوں سے نوازا تھا ۔۔۔۔

دو بیٹے دو بیٹیاں ۔۔۔۔۔خوشحال زندگی گزار رہے تھے ۔۔۔شعیب بہت خیال رکھتا تھا ان کا ۔۔۔۔

دنیا کی کسی چیز کی کمی نہ تھی ان کو ۔۔۔

جو بھی کما کر لاتا ۔۔۔۔شازیہ کے ہاتھ پہ رکھتا ۔۔۔۔

یہ لو آج کی کمائی ۔۔اب مجھے میرا خرچہ دو ۔۔۔

شازیہ مسکرانے لگتی ۔۔کما کر لاتے ہو پھر سارے  پیسے مجھے دیتے ہو۔۔۔۔اور پھر کہتے ہو اب خرچہ دو  ۔۔

تو پہلے کیوں نہیں رکھ لیتے اہنا ۔خرچہ ۔۔۔۔

شعیب مسکرانے لگا ۔۔۔۔ہائے میری پاگل ۔۔۔۔اسے ہی محبت کہتے ہیں ۔۔یہی تو وفائیں ہوتی ہیں میری جان ۔۔۔

اچھا شازیہ۔۔۔میں کیا سوچ رہا تھا ۔۔۔۔


اب کچھ پیسوں کی بچت کریں ۔۔۔۔مہنگائی بہت ہے ۔۔۔

میں سوچ رہا ہوں    کچھ پیسے جمع ہو جائیں تو ۔۔۔نئے مکان بنا لیں ۔۔۔۔

شازیہ پاس بیٹھی تھی ۔۔۔۔

شعیب ۔۔۔۔آپ کیوں ہر وقت مکانوں کی فکر کرتے رہتے ہیں ۔۔۔

بن جائیں گے انشاللہ  نہ ہوا کرو اتنا پریشان ۔۔۔۔۔

اللہ ہماری مدد کرے گا۔۔۔۔میں نے کمیٹی ڈالی ہوئی 8 لاکھ والی ۔۔۔انشاللہ وہ جب ملے گی کر لیں دو سال تک کچھ ۔۔۔

تم بس اپنا خیال رکھا کرو۔۔۔۔

اتنے میں بچے آپس میں لڑنے لگے ۔۔بڑی بیٹی روتے ہوئے آئی۔۔۔۔پاپا مجھے زین نے مارا ہے ۔۔۔۔

شعیب نے بھی کو گود میں بٹھایا ۔۔۔۔

میں زین کا علاج کرتا ہوں ۔۔۔۔ادھر آ توں میری جان ۔۔۔۔۔

یہ بتاو ۔۔۔سکول کا کام کر لیا ۔۔۔۔

اریبہ  کے آنسو صاف کیے ہاں پاپا کر لیا ہے ۔۔۔۔

بس اب اگلے ماہ ہمارے امتحان ہیں ۔۔پاپا میں فرسٹ آوں گی دیکھنا ۔۔۔۔

شعیب نے پیار سے سر پہ ہاتھ رکھا ۔۔۔۔

میری اریبہ فرسٹ آئے گی تو پھر ہم وہ بڑے والے ہوٹل پہ کھانا کھانے جائیں گے ۔۔۔۔۔

زین بھی اتنے میں پاس آیا ۔۔۔پاپا میں بھی جاوں گا ساتھ ۔۔۔۔

اریبہ چلا کر بولی ۔۔۔پاپا اس کو نہیں لے کر جانا یہ مارتا ہے مجھے ۔  ۔۔

زین اریبہ کی طرف دیکھ کر بولا ۔۔۔۔اور اور ۔ ۔بچو جو تم نے کل مجھ تھپڑ مارا تھا ۔۔۔۔۔

میری چاکلیٹ بھی کھائی تھی ۔۔۔۔

شعیب بچوں کی باتیں انجوائے کر رہا تھا  ۔۔جیسے دل کو جنت سی راحت مل رہی ہو۔۔۔۔۔

بچے باتیں کرتے کرتے شعیب کی گود میں ہی سو گئے ۔۔۔۔

شازیہ کام ختم کر کے آئی ۔۔۔شعیب بچوں کو بیڈ پہ لٹا دیں ۔۔۔۔

اور خود بھی سیدھے ہو کر سو جائیں ۔۔۔۔


شعیب نے ٹائم دیکھا ۔۔۔۔۔11 بج رہے تھے ۔۔۔شازیہ ابھی تک سوئی نہیں ۔۔۔۔۔

سر کو ہاتھ لگاتے ہوئے بولی ۔۔۔

اتنے زیادہ کپڑے تھے دھونے والے ۔۔۔بس وہ دھو رہی تھی ۔۔۔۔

اچھا کل دھو لیتی ۔نا۔۔۔شازیہ بیڈ پہ لیٹتے ہوئے ۔چہرے پہ کریم لگانے لگی ۔۔۔۔اوئے کنجوس ۔۔۔۔کتنی بار کہا ہے میری کریم لے آنا ہر روز بھول جاتے ہو ۔۔۔۔

شعیب کروٹ بدل کر بولا ۔۔۔۔کل پکا لے آوں گا ۔۔۔مجھے بڑی ٹھنڈ لگ رہی ہے اب نہ مجھے بلانا ۔۔۔۔۔

شازیہ نے کمبل اوڑھا۔پاگل کہیں کا میرا شہزادہ ۔۔۔۔


زندگی ہنسی خوشی گزر رہی تھی ۔۔۔۔

بڑی بیٹی امتحانات پاس کر لیئے فرسٹ آئی تھی بیٹا بھی کلاس میں فرسٹ آیا تھا ۔۔۔۔

اب بچے ضد کر رہے تھے اسی ہوٹل پہ جانا ہے کھانا کھانے ۔۔۔

ان دنوں  کام دھندا کافی خراب تھا ۔۔۔

ہزار بہانے بنائے لیکن بچے بضد تھے ۔۔۔۔

چھوٹی بیٹی بھی توتلی زبان میں بولی ۔۔۔پاپا مجھے بھی ساتھ لے تل دانا ۔۔۔میں بھی تھانہ تھانہ ہے ۔۔۔۔۔

شعیب مسکرانے لگا۔۔۔شازیہ کی طرف دیکھ کر بولا ۔۔۔اچھا سنو وہ سائکل بے کار ہی تو ہے بیچ دیتا ہوں ۔۔۔۔

شازیہ خاموش رہی ۔۔۔سائکل 4 ہزار کی بک گئی۔۔۔۔۔


ہوٹل پہ چلے گئے ۔۔۔۔شازیہ بھی ساتھ تھی پوری فیملی اس ہوٹل پہ گئے۔۔۔۔

ہوٹل اتنا صاف ستھرا تھا ۔۔۔۔سب لوگ بڑی بڑی گاڑیوں میں آ رہے تھے  ۔۔۔

ایک بائیک پہ 6 لوگ سوار ہو کر آئے تھے ۔۔۔۔سب حیرانگی سے دیکھنے لگے ۔۔۔۔

بچے بہت خوش تھے۔۔۔۔۔


سب لوگوں نے مہنگے مہنگے کپڑے پہنے ہوئے تھے ۔۔۔لیکن شعیب اور بچوں نے پرانے سے کپڑے ۔۔۔۔خیر ہوٹل میں  داخل ہوئے ۔۔

ایک ٹیبل پہ بیٹھ گئے جا  کر ۔۔۔۔

سب حقارت سے ان کی طرف دیکھ رہے تھے ۔۔۔

مینیو  کارڈ دیا گا ۔۔۔۔کھانا بہت مہنگا تھا ۔۔۔۔6 لوگوں کے لیئے 10 ہزار سے اوپر کا خرچ تھا ۔۔۔۔

شعیب پریشان ہو گیا۔۔۔۔


جیب میں 5 ہزار روپے تھے ۔۔۔بچے مینیو کارڈ سے تصویر دیکھ کر بولے پاپا یہی کھانا ہے۔۔۔مکس میٹ فیملی میل تھا ۔۔۔جس کی قیمت 9 ہزار تھی۔۔۔۔

شعیب کیا کہتا ۔۔۔بچے شور کر رہے تھے ۔۔۔۔

ہوٹل کا مالک سب کچھ دیکھ رہا تھا ۔۔۔اس نے کپڑوں کی حالت ے اندازہ لگا لیا تھا ان کی معاشی حالت کا۔۔۔۔

مالک پاس آیا ۔۔۔سر آپ کوئی آرڈر نہیں دے رہے۔۔۔۔

شعیب مسکرا کر بولا ۔۔۔سر اصل۔میں ہم کھانا کھانے نہیں ائے۔۔۔میرے بچے کلاس میں فرسٹ آئے ہیں بس اس خوشی میں کیک کھانے آئے ہیں ۔۔۔۔

ہوٹل کا مالک مسکرایا ۔۔۔ارے واہ ماشاللہ ۔۔۔۔

مبارک ہو جی ۔۔۔ٹھیک ہے آپ کے لیئے  کیک ابھی حاضر ہے ۔۔۔

اریبہ بولی پاپا ہم۔کو یہ کھانا تھا۔۔۔تصویر پہ ہاتھ رکھا تھا ۔۔۔ہوٹل مالک مسکرایا۔۔۔۔


5 منٹ بعد ۔۔۔کیک کے ساتھ بچوں کی پسند کا کھانا بھی پیش کیا گیا۔۔۔۔ہوٹل کے مالک نے مائیک میں اعلان کیا۔۔۔آج اریبہ اور زین کا سکول میں فرسٹ آنے کہ خوشی میں سب کو اسپیشل ڈسکاونٹ دی جائے گی ۔۔۔۔

بچے خوشی سے کھانا کھانے لگے ۔۔۔

جب کھانا کھا لیا ۔۔۔

شعیب کاوئنٹر پہ گیا ۔۔۔پیسے دینے لگا ۔۔۔ہوٹل کے مالک نے مسکراتے ہوئے  کہا ۔۔۔بس دعا  کردینا اور بچوں کو خوب پڑھانا ۔۔۔یہ وقت کبھی مجھ پہ گزرا ہے ۔۔۔۔

ثابت ہوا اللہ والے آج بھی موجود ہیں ۔۔

بچے بہت خوش تھے ۔۔۔۔۔


شعیب لاکھوں دعائیں دینے لگا۔۔۔۔

وقت گزرنے لگا ۔۔۔۔


بچے کہنے لگے عید نانو کے گھر کرنے جانا ہم نے   

شعیب نے شازیہ سے کہا تم لے جاو بچوں کو میں عید کے دوسرے دن آ جاوں گا۔۔۔

شازیہ غصے سے بولی م۔شعیب ۔۔بہت بگاڑ رکھا ہے بچوں کو ہر ضد مان لیتے ہو ۔۔۔

شعیب مسکرایا میں صدقے جاواں مندی شکل ۔۔جا ریڈی ہو جا میں چھوڑ آوں تم۔لوگوں کو۔۔۔

عید کا دن تھا ۔۔۔شعیب گھر میں اکیلا تھا۔۔

شعیب نے شازیہ کو فون کیا  ۔ یار موٹو ۔۔۔یہ بریانی کیسے بنتی یے۔۔۔

شازیہ مسکرانے لگی کیا کرنا آپ نے    

بھوکا ہوں صبح سے بتاو تم بس میں بنا لیتا ہوں ۔۔

شازیہ پیار سے بولی ۔۔۔۔رہنے دو تم ۔۔ایسا کرو یہی پہ آ جاو سب یاد کر رہے ہیں ۔۔۔۔

لیکن شعیب بضد تھا نہیں کل آوں گا ۔۔بس بتاو بریانی کیسے بنانی ہے۔۔ 

شازیہ بتانے لگی ۔۔۔کال۔بند ہوئی ۔۔۔۔

بچے پاپا کے بنا زیادہ دیر نہیں رہ سکتے تھے ۔۔۔

بہت یاد کر رہے تھے پاپا کو ۔۔۔۔

POWER

شازیہ خود کہاں ایک پل بھی دور رہ سکتی تھی شعیب سے ۔۔کتنا خوبصورت رشتہ ہوتا ہے نا بیوی شوہر کا۔۔

بے پناہ چاہتیں ۔۔بت پناہ محبتیں رم جم وفائیں ۔۔۔۔

شام کا وقت تھا شازیہ اپنی امی اور بہن کے پاس بیٹھی ہوئی تھئ۔۔۔

فون کی گھنٹی بجی ۔۔۔۔

شازیہ نے فون آٹھایا انجان نمبر تھا۔۔۔۔

ہیلو ۔۔۔۔۔دوسری طرف سے آواز آئی ۔۔۔۔شازیہ ہم۔برباد ہو گئے ۔۔۔

شازیہ گھبرا گئی ۔۔۔شعیب کا بھائی رو رہا تھا ۔۔۔

شازیہ کانپتی آواز میں بولی بھائی کیا ہوا۔۔۔

کانوں نے قیامت کی آہٹ  سنی ۔۔ 

شعیب فوت ہو گیا ہے۔۔۔۔۔


ہاتھ سے موبائل گر گیا۔۔۔بے ہوش ہو کر گئی ۔۔ابھی کچھ دیر پہلے تو بات ہوئی تھی میری۔۔۔۔

بچے کھیل رہے تھے ۔۔ان کو کیا پتہ تھا ۔قمست نے کیا چھین لیا ہم سے۔۔۔

نانو نے آواز دی بچو چلو اہنے گھر ۔۔۔بچوں نے انکار کر دیا۔۔۔پاپا کے ساتھ جانا ہے ۔۔۔

اب پاپا کہاں آنے والا تھا زندگی بھر ۔۔۔تقدیر کے تماشے تھے ۔۔

گھر پہنچے ۔۔بچے پاپا کو دیکھ رہے تھے ۔۔۔

زین پاپا کے پاس بیٹھا ۔۔۔پاپا یار ۔۔اٹھ جا نانو کے گھر چلتے ہیں ۔۔۔پاپا کے موبائل پہ کسی کا فون آ رہا تھا ۔۔زین نے جلدی سے فون اٹھایا ۔۔۔۔پاپا سو رہے ہیں ۔۔

پاپا اٹھو آپا کا فون آ رہا ہے سب چیخ چیخ کر رو رہے تھے ۔۔۔

اریبہ پاپا کے سینے پہ سر رکھ کر بیٹھی ہوئی تھی ۔۔۔

پاپا اب کہاں لاڈ اٹھانے والا تھا ۔۔۔۔

شازیہ کی تو جیسے روح نکل گئی تھی ۔۔۔۔

بچوں کو گود میں لیئے رونے لگی ۔۔۔۔

جنازہ اٹھا ۔۔۔گھر ویران سا ہو گیا ۔۔۔۔ابھی تک کچن میں شعیب کی بنائی ہوئی بریانی ابھی تک کچن میں پڑی ہوئی تھی ۔۔

چند لمحوں نے ہارٹ اٹیک کا بہانہ ہوا اور شعیب دنیا سے چل بسا۔۔۔

اب وقت پل صراط آیا تھا ۔۔۔۔اب وقت محشر گزرنا تھا شازیہ پہ ۔۔۔۔


بچے اداس بیٹھے تھے۔۔۔۔کچھ دن رشتہ دار ماتم کا ڈرامہ کرتے رہے پھر ۔۔۔حال پوچھنا بھی چھوڑ گئے۔۔۔۔

بچے پاپا کی راہ دیکھ رہے تھے لیکن اب کبھی نہ واپس آنے کے لیئے شعیب جا چکا تھا ۔۔۔اریبہ پاپا کے پاس سونے کی عادی تھی ۔۔۔اسے پاپا کی یاد ستانے لگی۔۔۔بخار ہو گیا۔۔۔دل تڑپ رہا تھا پاپا کی گود میں سونے کے لیئے لیکن پاپا کہاں آنے والے تھے 

اب بچے آپس میں جھگڑتے بھی نہیں تھے ۔۔۔۔

بس خاموش رہتے ۔۔۔۔۔

سکول کی فیس ادا کرنا تھی ۔۔جو جمع پونجی تھی سب ختم شریف پہ لگ گئی۔۔۔لوگ پیٹ بھر کر کھانا کھا گئے .۔۔نڈھال کر گئے ان کو۔۔۔۔

خیر اب چہرے رنگ بدلنے لگے..۔۔سب سہارے چھوڑنے لگے ۔۔۔ماں نے کہا بیٹی اکیلی کیا رہو گی ہمارے پاس آ جاو۔۔۔

امی کے گھر چلی گئی ۔۔۔چھ ماہ گزرے تھے ۔۔۔

بھابھی بھائی لہجے بدلنے لگے۔۔۔۔

بچے تو شرارتیں کرتے ہیں نا ۔۔۔۔اگر کوئی چیز توڑ دیں یا کوئی نقصان ہو جائے۔۔۔بھابھی ہزار باتیں سناتی شازیہ کو ۔۔شازیہ وہ تھی جو شعیب کی لاڈلی تھی لیکن اس کے بعد۔۔۔تلخیاں سہہ رہی تھی ۔۔۔

بچوں کو بھابھی نازیبا الفاظ بول دیتی ۔۔۔۔

شازیہ خاموش  ہو جاتی ۔۔۔۔


بھائی نے ایک دن  کہا ۔۔۔ہم اتنا خرچہ برداشت  نہیں کر سکتے تم اپنے  بچوں کو سرکاری سکول میں پڑھاو  ۔

شازیہ بہت روئی تھی ۔سکول کہ ٹاپ اسٹوڈینٹ تھی اریبہ ۔۔۔لیکن حالات مجبور کر گئے۔۔۔

اریبہ بہت روئی تھی امی مجھے نہ چھڑوائیں وہ سکول ۔۔میری سرکاری سکول نہیں پڑھنا چاہتی  ۔۔۔

شازیہ نے غصے سے ڈانٹا ۔۔۔پیسے تیرا پیو دے گا۔۔یہ الفاظ ادا کرتے ہوئے نہ جانے کتنی بار وہ مر گئی ۔۔

بیٹی کو سینے لگا کر پیار سمجھانے لگی.۔اریبہ اب تم۔سمجھدار ہو میں کہاں سے لاوں اتنے پیسے میری بچی۔۔۔

سرکاری سکول میں داخل کروایا سب بچوں کو ۔۔۔


لیکن ایک دن ماں نے کہا بیٹے کو ہوٹل پہ لگا دو۔۔چائے والے کپ دھو دیا کرے گا چار پیسے کما لے گا۔۔تیرے بھائ نے ایک ڈھابے والے سے بات کی ہے ۔۔

شازیہ تڑپ اٹھی .۔۔امی میں ابھی زندہ ہوں ۔۔میرے بچوں کو تو آپ سب نے گلی کا کوڑا سمجھ رکھا ہے ۔۔۔

شعیب کے مرنے کے بعد آپ سب نے رنگ ہی بدل لیا۔۔

شازیہ نے خود جاب کرنے کا فیصلہ کیا۔۔۔۔

بھائی نے بہت جھگڑا کیا .۔اگر جاب کرنی ہے تو دفعہ ہو جا یہاں سے۔۔۔

شازیہ بچوں کو لیئے اہنے گھر چلی گئی ۔۔۔

ایک پرائیوٹ سکول میں پڑھانے لگی۔۔۔گھر میں سلائی مشین رکھ لی محلے والوں کے کپڑے بھی سلائی کرنے لگی۔۔۔وہ حالات کی آنکھوں میں آنکھیں ڈال کر مقابلہ کر رہی تھی ۔۔۔وہ برتھ ڈے کیک بنانے میں ماہر تھی طرح طرح کے دلفریب ڈیزاینگ میں کیک بناتی تھی ۔۔۔ایک بیکری والے سے بات کی آپکو اگر اسپیشل کیک بنوانا ہو تو اگر آپ چاہیں تو میں بنا دیا کروں گی۔۔۔

کچھ تصاویر دکھائی اپنے بنائے کیک کی۔۔۔

بیکری والا اچھا انسان  تھا ۔۔۔اس کو کام بھی پسند آیا ۔۔۔جتنے وہ ایک کاریگر کو پیسے دیتا اس سے آدھی قیمت شازیہ کو ادا کرتا ۔۔۔شازیہ گھر بیٹھے آرڈر لیتی اور کیک  تیار کر دیتی ۔۔۔۔اللہ نے کرم  فرمایا ۔۔۔وہ دو وقت کی روٹی عزت سے کمانے لگی۔۔۔

ہاں کچھ بد نسل مرد آئے تھے اس کا سودا کرنے شازیہ نے سر عام گریبان سے پکڑ کر ان کو آئینہ دکھایا۔۔۔

کچھ رشتے بھی آئے تھے ۔۔۔لیکن شازیہ نے یہ کہہ کر انکار کر دیا۔۔۔تم لوگوں کو ہمسفر کی نہیں نوکرانی کی ضرورت ہے ۔۔میں اہنے بچوں کے لیئے اللہ کے کرم سے دو وقت کی روٹی کما سکتی ہوں 

کچھ  رشتہ داروں نے عزت اچھالنے کئ کوشش کی لیکن شازیہ کو اللہ پہ بھروسہ تھا ۔۔۔۔۔ہمیشہ کہتی تھی ۔۔عزت و ذلت اللہ کے ہاتھ ہے۔۔۔میرے لیئے اللہ کافی ہے ۔۔۔

وہ جانتی تھی اکیلی عورت کا جینا اس معاشرے میں آسان نہیں ہے ۔۔۔۔لوگ قدم قدم پہ درندے کی صورت میں ملتے ہیں ۔۔۔وہ تھک گئی تھی اب ذمہ داریاں نبھاتے نبھاتے ا۔بچوں کی اچھی تربیت کی ان کو پڑھایا ۔۔۔۔

بچے اب جوان ہو چکے تھے ۔۔۔کافی مشکل حالات سے گزری تھی ۔۔۔لیکن ثابت قدم رہی ۔۔۔ہاں سب رشتے چھوڑ گئے تھے میکے والوں  نے بھی تعلق توڑ دیا تھا ۔سسرال والے تو شعیب کی زندگی میں اہنے نہ بنے تھے اب کیا بنتے ۔پرانا سا گھر جو شعیب نے بنایا تھا اس میں گزارا کر رہی تھی 20 سال گزر گئے اب بوڑھی ہو چکی تھی ۔

ایسا وقت بھی آیا ۔۔۔۔بھوک پیاس تھی بچے بلک رہے تھے لیکن ۔۔جسم فروشی یا حرام کی طرف نہیں گئی ۔۔۔۔اسے اللہ پہ کامل یقین تھا ۔۔۔۔

زین نے سول سروئیر کا ڈپلومہ کیا۔۔۔۔اب 22 سال کا جوان ہو چکا تھا ۔۔۔۔

ماما مجھے دبئی یا کسی بھی کنٹری بیجھ دیں ۔۔۔

ماں نے کہا پاکستان میں ہی جاب کرو ۔۔۔لیکن زین باہر کہیں جاب کرنا چاہتاتھا ۔۔۔پھر اللہ نے کرم کیا ۔۔۔زین کو اچھی جاب مل گئی مہینے کا ڈیڑھ لاکھ کمانے لگا۔۔۔اریبہ نے بی ایڈ کیا تھا ذہین تھی ۔۔۔گورنمنٹ ٹیچر کی جاب مل گئی ۔۔۔۔چھوٹا بیٹا ۔۔۔پولیس میں بھرتی ہو گیا ۔۔۔سب سے چھوٹی بیٹی ایم بی بی ایس کر رہی تھی ۔۔۔

طویل مشکل کا سامنا کرنے کے بعد حالات پھر بدلنے لگے ۔۔۔

زین پیسے بیجھنے لگا ۔۔۔۔اریبہ کی بھی 50 ہزار سے زاہد تنخواہ تھی ۔۔۔

گھر بنا لیا ۔۔۔۔خوشحال ہو گئے ۔۔۔


کار بھی لے لی ۔۔۔۔کبھی وہ وقت تھا کیک بنانا ۔۔۔کپڑے سلائی کرنے سکول جانا ۔۔۔تھک ہار جاتی تھی مشکل سے 20 ہزار کما پاتی ۔۔۔اب مہینے کا 4 لاکھ آ رہا تھا ۔۔اللہ کے حضور سجدے میں گر کر رونے لگی ۔۔۔۔

اے اللہ تیرا لاکھ لاکھ شکر ہے مجھے کبھی میرے اللہ نے اکیلا نہیں چھوڑا ۔۔۔

چھوٹا بیٹا پولیس والا اسد ۔۔۔لوگ جانتے ہیں اسے۔۔ہر بندہ عزت کرتا ہے ۔۔۔

اب اریبہ اور زین کی شادی تھی ۔۔۔سب غریبی میں چھوڑ جانے والے رشتہ دار ۔۔ایک ایک کر کے پھر لوٹ کر آنے لگے ۔۔۔۔

زین اریبہ اسد اور چھوٹی بیٹی کرن ۔۔۔اسی ہوٹل میں گئے یہاں کبھی بابا نے سائیکل بیچ کر کھانا کھلایا تھا ۔۔۔

شازیہ بہت رو رہی تھی ۔۔۔۔

کاش آج شعیب زندہ ہوتا ۔۔۔ہم اپنی کار پہ آئے ہم سب لوگ اسد کو سلام کر رہے ہیں ۔۔۔۔

وہ سامنے کھڑا ہوٹل کا مالک بوڑھا ہو چکا تھا مسکرا رہا تھا ۔۔اس نے برسوں بعد بھی شازیہ کو پہچان لیا  تھا اریبہ کو وہ نیکی یاد تھی ہوٹل کے مالک کی ۔۔۔

شکریہ ادا کیا ۔۔ہوٹل مالک نے سر پہ ہاتھ رکھا بیٹی خوش رہو ۔۔۔۔

شازیہ نے ثابت کر دیا تھا ۔۔۔شوہر کے بعد بچوں کو خاک نہیں ہونے دیتی ماں ۔۔۔وہ ثابت قدم رہ کر ۔۔۔ایک ہی وقت میں ماں اور باپ بن جاتی ہے ۔۔۔

وہ حالات سے لڑنا سیکھ جاتی ہے وہ حرام راستے پہ تھوکتی ہے ۔۔۔محنت کرتی یے ۔۔۔۔کیا ہوا طلاق ہو گئی چار بچے ہیں اور اب بچوں کی فکر میں زندگی عذاب لگ رہی ۔۔۔شازیہ آپ کے سامنے ہے اسے دیکھو ہر مشکل سے گزر گئی آخر اللہ نے کرم فرمایا ۔۔۔بچے لاکھوں کمانے لگے ۔۔۔حالات بدل ہی جاتے ہیں اللہ پہ کامل یقین رکھو ۔۔۔

یہ تحریر ان بہن بیٹیوں کے لیے ہے ۔۔۔جن کے شوہر نے طلاق دے دی یا جس کا شوہر فوت ہو چکا ۔۔صبر رکھیں ہمت سے کام لیں ۔۔۔اپنے بچوں کی ڈھال بن  جائیں انشاللہ وقت بدلے گا ۔۔۔سب منافق رشتے پھر لوٹ کر قدموں میں آئیں گے ۔۔رونا دھونا بند کرو۔۔۔کیا اللہ پہ یقین نہیں آپ کو ۔۔۔

شازیہ آپ کے سامنے ہے ۔۔۔وہ ہر درد سہہ کر آج خوشحال ہے۔۔اہنے بچوں کو رو کر نہ دکھائیں ان کی ہمت بنیں اور بتائیں زمانے کو عورت اتنی بھی کمزور نہیں ہے ۔۔عورت چاہے تو چٹان کو ریزہ ریزہ کر سکتی ہے  پانچ وقت کی نماز ادا کریں اور آج سے آنسو صاف کریں اور اپنی تقدیر خود لکھیں ۔۔۔۔

بنت حوا چاہے تو اتحاز لکھ سکتی ہے۔۔نسلیں سنوار سکتی ہے ۔۔۔۔۔آپ اتنی کمزور نہیں ہیں تھوڑی سی ہمت کی ضرورت ہے ۔



Post a Comment

0 Comments