Urdu Kahani har kesi ko io dildar milta nahi | emotional urdu kahani | intresting urdu story | اردو سچی کہانی ہرکسی کو یہ دلدار ملتا نہیں

 اردو سچی کہانی  ہرکسی کو یہ دلدار ملتا نہیں

عجیب سی لڑکی تھی ۔۔۔

بہت سخت مزاج۔۔۔مجال ہے گھر میں اس کے سامنے کوئی بولتا ہو۔۔۔

گھر والوں نے تو نام رکھا تھا۔۔۔۔سجل ۔۔۔لیکن اہنے سخت رویے کی وجہ سے ۔۔۔سب اسے ہٹلر کہتے تھے ۔۔۔

ساگر ۔۔گھر آیا ۔۔۔

سجل دروازے پہ کھڑی تھی۔۔۔

ہاں جناب ۔۔۔کدھر منہ اٹھائے ہوئے۔۔۔

ساگر ۔۔۔آہستہ سے مسکرا کر بولا۔۔۔گھر  آ رہا ہوں آور کہاں 

سجل ہاتھ میں جوتا پکڑے۔۔۔۔

میرا فیس واش لے کر آئے ہو۔۔۔

ساگر ۔۔۔۔ہلکا سا مسکرایا۔۔۔۔میں نہں جانا تمہارا کچھ بھی سامان لینے شرم آتی ہے مجھے ۔۔۔

سجل جھٹ سے بولی۔۔۔شرم اور تم کو ۔۔۔

میرا منہ نہ کھلوانا اب ۔۔۔۔وہ تمہاری محبوبہ ہے نا ۔۔۔دکان والوں  کی ۔۔۔۔عافیہ ۔۔۔سب جانتی ہوں ۔۔۔

ساگر آہستہ سے بولا۔۔۔۔کیا یے تم کو جاتا ہوں ابھی لا کر دیتا ہوں فیس واش ۔۔۔

شکل تو دیکھو فیس واش لگانے والی۔۔

سجل ۔۔۔غصے سے بولی  کیا کہا پھر بکواس کرو۔۔۔

ساگر ۔۔۔مسکرایا۔۔۔کچھ نہیں کہا ۔۔۔جا کر رہا ہوں ۔۔بازار ۔۔

ساگر نے بائیک اسٹارٹ کی جانے لگا ۔۔۔منہ میں بولا ۔۔۔سچ ہی کہتے ہیں اس کو ہٹلر ۔۔۔ظالم۔۔۔۔۔۔۔

ساگر اور سجل دونوں کزن تھے۔۔۔

ایک ہی گھر میں رہتے تھے جوائنٹ فیملی تھی ۔۔۔سجل ۔۔۔ساگر کے چاچو کی بیٹی تھی۔۔۔چاچو فوت ہو چکے تھے ۔۔۔اسلیے سجل اس کا بھائی اور ماں ساگر لوگوں کے پاس ہی رہتے تھے ۔۔

سجل نے بی اے کرنے کے بعد ۔۔۔پڑھائی چھوڑ دی تھی۔۔

جبکہ ساگر ۔۔۔۔ایم فل کر رہا تھا ۔۔۔

سجل پیاری سی تھی ۔۔۔

ساگر گھر ایا ۔۔۔فیس واش ۔۔۔۔ہاتھ میں لیئے۔۔۔

چاچی جان ۔۔۔ہٹلر کہاں ہے۔۔۔

چاچی آہستہ سے بولی۔۔۔آرام سے بول سن لے گی تو پھر جھگڑا کرے گی ۔۔

ساگر ۔۔۔غصے سے بولا سن لے سنتی ہے تو ۔۔۔میں ڈرتا ہوں اس سے۔۔۔

چاچی مجھے تو کبھی کبھی لگتا ہے ۔۔۔

ہٹلر ہماری ہے ہی نہیں۔۔۔ہسپتال میں کسی نے بچہ بدل دیا ہو گا۔۔۔

ساگر کی ماں ڈانٹ کر بولی بکواس نہ کرتے رہا کرو۔۔۔جو منہ میں آتا بھکتے  رہتے ہو۔۔۔

ماں پکوڑے بنا رہی تھی۔۔۔

آج سجل کی فرمائش کے کڑی پکوڑے بن رہے تھے ۔۔۔

ساگر نے ایک پکوڑا اٹھایا۔۔۔۔

منہ میں ڈالنے ہی لگا تھا کے۔۔۔۔سجل ۔۔۔دوڑتے ہوئے ا رہی تھی ہاتھ میں ڈنڈا پکڑے ہوئے۔۔۔اج اس کی خیر نہیں۔۔۔

ساگر دیکھ کر ڈر گئا ۔۔۔

یہ بھی پڑھیں  اردو سچی کہانی  محبت کا سفر

امی میں نے تو کچھ کہا بھی نہں یہ ہٹلر ہاتھ میں ڈنڈا لیئے کیوں آ رہی یے۔۔۔

چاچی ۔۔۔مسکرا کر بولی۔۔۔۔دو گھنٹے سے چوہے کے پیچھے لگی ہوئی یے۔۔۔

اس کو مار رہی ۔۔۔

ساگر ۔۔۔۔حیرانگی میں بولا۔۔۔چوہا مار رہی ہے۔۔۔

ساگر پاس گئا۔۔۔

دیکھا۔۔۔چوہا کبھی ادھر بھاگ رہا کبھی ادھر۔۔۔

ساگر کو دھکا دیا۔۔۔

پراں ہٹ جا۔۔۔۔سامنے نہ آ میرے ۔۔۔

اس کی خیر نہیں۔۔۔۔

میرا ناول ۔۔۔۔اس نے کاٹ دیا ہے ۔۔۔۔پھر ۔۔۔کسی توپ کے مزائل کی طرح جوتا ۔۔۔سیدھا چوہے میاں کو لگا ۔۔اور وہی ڈھیر ہو گئے۔۔۔

چوہا مار کر۔۔۔پاس بیٹھ گئی 

۔چوہے ۔۔۔کے بچے اب ۔۔۔توں سب کو بتانا۔۔سجل کے ساتھ پنگا اچھا نہیں ہوتا۔۔۔

ساگر ۔۔۔سجل کی طرف دیکھ رہا تھا ۔۔۔

بات کچھ یوں تھی ساگر ۔۔۔چوہے سے ڈرتا بہت تھا۔۔۔۔

ساگر نے آہستہ سے پاوں سے جوتا اتار لیا۔۔۔

سجل نے چوہے کو پونچھ سے پکڑا۔۔۔۔

ساگر کے پیچھے بھاگنے لگی ۔۔۔ساگر قسمیں دینے لگا۔۔۔تجھے تیری امی کی قسم ۔۔تجھے میری امی کی قسم۔۔۔تجھے دنیا کی سب امیوں کی قسم۔۔۔چوہا مجھ پہ نہ پھینکنا ۔۔۔

سجل رک گئ ۔۔۔اچھا نہیں پھینکون گی۔۔۔

میرے ساتھ پہلے ایک وعدہ کر ۔۔۔

ساگر بنا کچھ سنے ۔۔۔بولا۔۔وعدہ کرتا ہوں پکا پکا وعدہ کرتا ہوں۔۔

سجل منہ  بنا کر بولی سن تو لے ۔۔۔

ساگر جان چھڑاتے  ہوئے بولا ۔۔سب منظور ہے ۔جو کہو ۔۔گی۔۔

سجل ۔۔۔مسکرا کر بولی۔۔۔اج مجھے آئس کریم کھلانے لے کر جاو گے ۔۔

اور ابو کو راضی کرو گے ہم آئس کریم کھانے جانا ہے ۔۔

ساگر۔۔۔گھبرا کر بولا۔۔ہاں میں ابو کو راضی کر لوں گا ۔۔اب چوہا پھینک دے نا ۔۔۔

سجل نے چوہا باہر پھینکا ۔۔۔ڈرپوک کہیں کا۔۔

اب ۔۔۔ابو آنے والے ہیں میں کھانا نہیں کھا رہی سمجھے۔۔

ساگر ۔۔۔سانس لیتے ہوئے بولا۔۔

سجل ایک بات کہوں ۔

سجل ۔۔پیار سے بولی ۔۔۔ہاں۔۔۔بولو۔۔

میرا دل کر رہا ہے میں نا عید پہ نا تم کو پارک گھمانے لے جاوں۔۔

سجل ساگر کی جانب دیکھنے لگی ۔۔۔خیر ہے نا۔۔۔

بڑا پیار آ رہا تم کو۔۔۔

ساگر ۔۔۔ہچکچا کر بولا۔۔۔۔

وہ بات ایسے اج تو امی نے تمہاری فیورٹ ۔۔۔کڑی پکوڑا بنائی یے ۔۔۔اج رہنے دو نا۔۔۔آئس کریم کھانے کو۔۔۔

عید پہ لے جاوں گا ۔۔۔نا پارک گھمانے کے لیئے۔۔

سجل ۔۔۔۔نے گریبان سے پکڑا۔۔۔

ساگر ۔۔۔دانت تڑوانے  ہیں مجھ سے کیا۔۔۔ابو آتے ہیں تو ۔۔ہم جا رہے ہیں سمجھے ۔۔۔

ساگر چپ ہو گیا ۔۔۔

چاچی۔۔کے پاس گئا ۔۔۔چاچی ۔۔۔ہٹلر کو سمجھا لو۔۔۔

چاچی مسکرا کر بولی اب کیا ہو گیا ہے ۔۔۔

وہ زبردستی سارے کام کرواتی ہے ۔۔۔اس کو بولو میری عزت کیا کرے۔۔۔میں اس سے بڑا ہوں   

اتنے میں سجل بھی آ گئی ۔۔۔واہ واہ ۔۔۔کتنے بڑے ہو مجھ سے۔۔

ساگر بولا ۔۔۔وہ معنے  نہیں رکھتا کتنا بڑا ہوں ۔۔بس اتنا دیکھو کے بڑا ہوں تم سے۔۔

سجل پاس آئی ۔۔بتاو نا کتنے بڑے ہو مجھ سے۔۔۔

ساگر ۔۔۔۔ڈرتے ہوئے۔ بولا۔۔۔

یہ بھی پڑھیں اردو سچی کہانی عشق میری پوجا

دیکھ سجل۔۔۔مجھے عزت سے بلایا کرو۔۔۔

میں ت ت تم سے ۔۔۔۔پورا 2 گھنٹے 40 منٹ بڑا ہوں ۔۔

اسلیئے تم پہ فرض ہے مجھے عزت دینا ۔۔

سجل ماں کی طرف دیکھ کر بولی۔۔۔

اوئے بندر۔۔۔جا ابو آ گئے ہیں۔۔۔چلو ابو سے پوچھو۔۔اور آئس کریم کھانے چلتے ہیں۔۔۔

ماں سجل کو ڈانٹنے لگی۔۔۔سجل ۔۔۔باہر موسم خراب ہے بارش ہونے والی ہے ۔۔۔اور تم کو ۔۔۔آئس کریم کھانے کی پڑی ہے۔۔۔سجل کی ضد کے سامنے بھلا کون بول سکتا تھا ۔۔۔ساگر کی ماں  بھی آ گئی۔۔

ساگر۔۔۔جاو لے جاو ۔۔۔میری بچی کو۔۔۔

تیرے ابو آ گئے ہیں ۔۔۔

سجل بہت لاڈلی بھی تھئ ۔۔۔

ابو سے کافی باتیں سننے کے بعد آخر۔۔۔ابو مان گئے۔۔۔اچھا جاو اور جلدی ا جانا ۔۔۔

ساگر نے بائیک اسٹارٹ کی ۔۔۔

چل آ جا اب ۔۔۔۔سجل ۔۔۔بائیک پہ بیٹھی چلو ۔۔۔ساگر طنز کرتے ہوئے بولا ۔۔۔کیا مطلب چلو۔۔ہم جنگ  لڑنے جا رہے ہیں 


لڑکی ہو تم۔۔۔کوئی میک اپ کرو  کوئی لپ اسٹک لگاو۔۔

تیار ہو کر جاو۔۔۔

یہ کیا۔ ڈاکو رانی کی طرح ۔۔۔چلو۔۔

سجل ۔۔۔غصے سے بولی۔۔۔چل چل توں ایا بڑا میک اپ کروانے والا۔۔۔

مجھے نہیں اچھا لگتا میک اپ کرنا ۔۔اللہ نے جیسا بنایا ہے شکر الحمداللہ۔۔۔

دونوں آیس کریم والے کے پاس پہنچے ۔۔۔

سجل کا دل چاہ رہا تھا پیزا کھانے کو۔۔ساگر ۔۔چلو نا پیزا کھا لیتے آئس کریم رہنے دو ۔۔

ساگر ۔۔۔غصے سے بولا۔۔۔آئس کریم کھانی ہے تو بتاو۔۔ورنہ میں گھر جا رہا ہوں ۔۔

سجل کے سامنے ہارنا ہی پڑتا تھا ۔۔۔

جانتا تھا جو کہہ رہی ہے ماننا پڑے گا ۔۔۔

پیزا آرڈر کیا۔۔۔۔وہی ریسٹورنٹ بیٹھ گئے۔۔۔

بارش برسنے لگی۔۔۔

بہت پیارا موسم تھا ۔۔۔ریسٹورنٹ۔۔۔۔کا باہر منظر بہت دلفریب تھا ۔۔۔بارش بہت تیز تھی ۔۔

سجل۔۔۔بارش انجوائے کرنے کے لیے ۔۔ہوٹل کے دروازے پہ کھڑی ہو گئی۔۔

ساگر سے کہنے لگی جب تک پیزا نہیں تیار ہوتا میں باہر کھڑی ہوں 


اتنے میں ایک منچلا لڑکا سجل کی جانب دیکھ کر اشارہ کرنے لگا۔۔سجل نے اگنور کر دیا۔۔۔

وہ لڑکا بار بار سجل کو کبھی انکھ مارتا کبھی کوئی اشارہ کرتا۔۔۔سجل برداشت کرتی رہی۔۔

وہ لڑکا۔۔۔پاس آیا۔۔۔سجل کے ہاتھ میں ایک کاغذ تھما دیا ۔۔۔یہ لو میرا فون نمبر۔۔۔

سجل کا دماغ گھوم گیا۔۔۔

اس لڑکے کو گریبان سے پکڑ لیا۔۔۔

تیری اتنی ہمت۔۔توں مجھے نمبر دیتا ہے ۔۔آنکھ مارتا ہے۔

شکل دیکھی یے اپنی۔۔بندر کہیں کے ۔

بڑا آیا رانجھا ۔۔۔لڑکا بھاگنا چاہتا تھا وہاں سے

سجل نے گریبان سے پکڑ لیا ۔۔۔آنکھ مار مجھے ۔۔۔مار نا آنکھ۔۔

سب لوگ اکٹھے ہو گئے ۔۔۔

ساگر نے دیکھا باہر کیا ہوا ہے ۔۔وہ بھی آیا ۔۔

سجل سب کو مخاطب کر کے بولی یہ مجھے آنکھ مار رہا تھا۔۔مجھ نمبر بھئ دیا اس نے ۔۔اس کی اتنی ہمت ۔۔

اس لڑکے کو 2۔۔چار تھپڑ بھی مار دیئے ۔۔۔

یہ بھی پڑھیں اردو سچی کہانی ماں کی فریاد

لڑکا آہستہ سے بولا۔۔باجی معاف کر دو۔۔۔غلطی ہو گئی۔۔سجل غصے سے چلانے لگی۔۔۔

نہیں نہیں آنکھ مار نا مجھے ۔۔۔میں پولیس کو کال کروں گی بڑا شوق ہے نا تم کو نمبر دینے کا۔۔

ساگر آگے بڑھا ۔۔سجل چھوڑ اسے۔۔وہ معافی مانگ رہا ہے۔۔مشکل سے اس لڑکے کو چھڑایا ۔۔۔

وہ لڑکا ۔۔۔۔پانچ سو کی سپیڈ سے بھاگ گئا وہاں  سے۔۔۔

سب نے کہا  واہ کیا بہادر لڑکی ہے ۔۔۔ساگر منہ میں بولا ۔۔یہ لڑکی ہے ہٹلر ہے ہٹلر ہے۔۔

سجل بال میں ہاتھ پھیرتے ہوئے   ۔ہوٹل کے ویٹر سے بولی ۔۔پیزا نہیں ریڈی ہوا کیا۔۔۔

ویٹر ڈرتے ہوئے بولا۔۔۔باجی ریڈی ہے ۔۔آپ آ جائیں 

سجل۔۔۔سامنے بیٹھی ہوئی تھی ۔۔ساگر ۔۔آہستہ سے بولا۔۔۔

سجل ہر جگہ پنگا ضرور کرنا ہوتا تم نے ۔۔

وہ بیچارہ معافی بھی مانگ رہا تھا ۔۔سجل نے ساگر کی جانب دیکھا۔۔۔چپ کر کے پیزا کھا۔۔۔تم مرد ایسے نہیں سدھرتے

پیزا ختم ہوا۔۔۔۔سجل بولی جا بل کروا کر آ ۔۔

ساگر نے پاکٹ میں ہاتھ ڈالا۔۔۔

اوئے تیری ۔۔۔پرس  گھر بھول آیا ہوں 

سجل۔۔۔منہ بنا کر بولی۔۔۔۔میں پیسے نہیں  دوں گی ۔۔

ساگر نے ہاتھ پکڑا ۔۔۔اج دے دو نا ۔۔۔قسم سے گھر جا کر پیسے دے دوں گا۔۔ورنہ یہ ہوٹل والے میری دھلائی کریں گے ۔۔ساگر منتیں کرنے لگا۔۔

سجل۔۔۔ڈانٹ کر بولی۔۔کیا غریب کزن دیا ہے اللہ نے مجھے ۔۔لوگوں کے کزن ۔۔۔تو شہزادے ہوتے ہیں اور میرا جب دیکھو بھکاری کی شکل بنائی ہوئی 

وہ گھر جانے لگے۔۔۔بارش برس رہی تھی۔۔۔

دونوں بھیگ گئے تھے ۔۔۔

سجل خے بھیگے بال 

اج نہ جانے کیوں   کیسے ۔۔۔ساگر کا دل ۔۔سجل کے لیئے دھڑک رہا تھا ۔۔

سجل کے گیلے بال ۔۔۔بہت پیاری لگ رہی تھی۔۔۔ساگر۔۔سجل کی جانب دیکھ کر بولا۔۔۔سجل ۔۔۔ایک بات کہوں۔۔۔

سجل نے ہاں میں سر ہلایا ۔۔۔

ساگر خاموش ہو گیا ۔۔۔وہ لڑکے والا سین یاد آ گیا 

کچھ نہیں۔۔۔گھر چلے گئے۔۔۔سجل اپنے کمرے میں گئی۔۔۔چینج کیا ۔۔۔

ساگر ۔۔۔۔شکر ادا کر رہا تھا اج سجل تھی تو بچ گئا ۔۔۔ورنہ کیا ہوتا میرے ساتھ۔۔۔۔

وقت گزرنے لگا۔۔۔۔

سجل کی شادی کی باتیں ہونے لگیں۔۔

گھر والوں نے تو سوچا تھا ۔۔سجل اور ساگر کی شادی کروا دیں گے ۔

لیکن ۔۔۔ساگر نے انکار کر دیا۔۔۔

سجل بھئ سامنے کھڑی تھئ ۔۔۔ساگر ۔۔۔مسکرا کر بولا۔۔میں تو اس کو ایک منٹ بھی برداشت نہیں کر سکتا۔۔آپ شادی کی بات کر رہے۔۔

اس ہٹلر کے لیے کوئی لڑکا ڈھونڈو اور اس کو بیجھو یہان سے ۔۔میں تو شکر ادا کروں ۔۔ساگر تو مذاق میں کہہ رہا تھا ۔۔۔لیکن سجل اداس ہو گئی۔۔۔

شادی کی بات سن کر ہی سجل پریشان ہو گئی تھی ۔۔۔

وہ کھیلتے کھیلتے سب سے لڑتے جھگڑتے کب بڑی ہو گئی پتہ ہی نہیں چلا۔۔۔

ساگر نے تو صاف انکار کر دیا۔۔۔

ساگر ۔۔۔گارڈن میں بیٹھا چائے پی رہا تھا ۔۔۔

سجل پاس۔۔آئی ۔۔

ساگر ۔۔کی طرف دیکھ کر بولی۔۔۔اوئے پاگل بات سن نا میری ۔۔

ساگر فیسبک دیکھ رہا تھا ۔۔۔

ہاں بولو۔۔۔۔

سجل پیار سے بولی میری طرف دیکھو نا  ۔۔

ساگر نظر اٹھا کر دیکھا۔۔۔

سجل نے آج میک اپ کیا ہوا تھا ۔۔۔بہت بہت پیاری لگ رہی تھئ ۔۔۔

ساگر کی آنکھیں کھلی کی کھلی رہ گئیں۔۔

سجل ۔۔۔یہ تم ہی ہو نا۔۔۔

ماشاءاللہ کتنی پیاری لگ رہی ہو ۔۔۔

سجل خاموش ہو گئی۔۔۔پھر شادی سے کیوں انکار کر دیا۔۔

ساگر خاموش ہو گیا۔۔

سجل پاس بیٹھ کر بولی۔۔

اچھا سوری  فار ایوری تھینگ   ۔بہت جلد چکی جاوں گی۔۔

پاگل۔۔۔خوش رہنا ۔۔

چھوڑ جاوں گی جان تمہاری۔۔یہ لیتے ہوئے ۔۔سجل کی آنکھیں نہ جانے کیوں نم ہو گئیں تھیں۔۔

ساگر ۔۔۔نے پوچھنا چاہا سجل کیا ہوا۔۔۔

سجل چلی گئی۔۔۔

کچھ دن گزرے۔۔۔ایک رشتہ دیکھا۔۔۔لڑکا ۔۔کسی محکمے میں آفیسر تھا۔۔۔بات پکی ہو گئی۔۔۔

لڑکے والے دیکھنے آئے  ۔لڑکا بھئ ساتھ ایا تھا ۔۔۔

سجل چائے لیکر آئی۔۔۔

لڑکے نے کہا میں سجل سے اکیلے میں بات کرنا چایتا ہوں۔۔

سجل آنکھیں جھکائے کھڑی تھی ۔۔

وہ لڑکا عرفان ۔۔آہستہ سے بولا۔۔۔

دیکھیں بات صاف سیدھی یے ۔۔۔آپ کو ہمارا پورا گھر سنبھالنا ہو گا۔۔۔

کھانا بنانا صاف صفائی اور میرے ماں باپ کی عزت کرنا۔۔

سجل نے ہاں میں سر ہلایا ۔۔۔

لڑکے والوں۔۔نے کافی جہیز کی مانگ کی تھی۔۔۔۔

خیر بات پکی ہو گئی۔۔۔

سب بہت خوش تھے سوائے ۔۔سجل کے۔۔

سجل اب خاموش سی ہو گئی تھئ ۔۔

ساگر ہاتھ میں ڈنڈا لیئے ۔۔۔سجل کے پاس آیا سجل میرے کمرے میں چوہا ہے جلدی آو۔۔۔

سجل خاموش لیٹی رہی۔۔

آہستہ سے بولی۔۔ساگر ۔۔۔مجھے نیند آئی ہے سونے دو۔۔

جیسے وہ کہیں کھو گئی تھئ ۔۔۔بلکل چپ چپ سی۔۔خاموش سی۔۔

یا شاید لڑکیاں ایسی ہی ہوتی ہے ۔۔شادی کے نام پہ اداس سی ہو جاتی ہیں ۔۔۔

اپنے انے والے کل کے لیے پریشان ہو جاتی ہیں۔۔

ساگر پاس بیٹھا۔۔۔سجل کا ہاتھ پکڑا ۔۔سجل کیا ہوا ہے تم کو۔۔۔

کیوں اتنی پریشان ہو۔۔

کیا لڑکا پسند نہیں تم کو۔۔۔سجل چپ رہی۔۔۔ساگر ۔۔۔مجھے اکیلا رہنے دو۔۔

ساگر بولا۔۔۔سجل۔۔تم کبھی اتنی خاموش نہیں رہی نا ۔۔اج یوں دیکھا تو اچھا نہیں لگا۔۔۔

دو دن بعد شادی ہے تمہاری کیوں اداس ہو اتنی۔۔

سجل۔۔روتے ہوئے بولی بابا کی یاد آ  رہی ہے ۔۔

ساگر نے ہاتھ مضبوطی سے تھاما ہم سب ہیں نا تمہارے ساتھ ۔۔۔اللہ چاچو کو جنت میں جگہ دے۔۔

سجل اج بہت رو رہی تھی۔۔

ساگر  نے پہلی بار سجل کو ایسے روتا دیکھا تھا۔۔سجل تو بہت مضبوط تھی۔۔۔اج پھر ایسی کیوں   

سجل کی بڑی بڑی آنکھیں سرخ ہو گئی تھیں ۔۔ساگر ۔۔کچھ کہنا چاہتا  تھا ۔۔۔

سجل نے ہاتھ جوڑے ساگر اکیلا چھوڑ دو مجھے ۔۔


نکاح کا وقت تھا ۔۔۔سجل دلہن کے روپ میں بے پناہ خوبصورت لگ رہی تھئ ۔۔۔

سجل کو دیکھ کر۔۔ساگر۔۔۔کا دل دھڑکنے لگا ۔۔

سجل کے پاس آیا ۔۔۔ماشاللہ بہت پیاری لگ رہی ہو۔۔

سجل خاموش تھی ۔۔۔

اتنے میں لڑکے والوں نے شور مچا دیا ۔۔۔

لڑکے کی ماں کہہ رہی تھی جہیز میں کار کا کہا تھا ۔۔وہ آپ لوگوں نے دینی تھی ۔۔۔لیکن اب آپ لوگ مکر گئے اپنی بات سے۔۔

ساگر کے ابو آہستہ سے بولے ۔۔بہن جی اتنا کچھ تو دے رہے ہیں دو بائیک دی ہیں اور ہم لوگ افورڈ نہیں کر سکتے ۔۔

لڑکے کی ماں  چلا کر بولی۔۔۔کار دو گے تو نکاح ہو گا۔۔۔

ساگر سب سن رہا ۔۔سجل سامنے کھڑی تھی ۔۔۔سر جھکائے۔۔۔

سجل کی آنکھیں نم تھیں ۔۔

سب رشتہ دار بھی پاس تھے ۔۔۔

ساگر کے بابا اب یہ شادی نہں توڑنا چاہتے تھے ۔مجبور ہو کر بولے۔۔ٹھیک ہے میں کار کے 20 لاکھ دیتا ہوں ۔۔لڑکے کی ماں مسکرا کر بولی ٹھیک ہے اب نکاح پڑھائیں مولوی صاحب ۔۔۔

مولوی صاحب ۔۔۔نے پوچھا۔۔۔کیا سجل اپ کو عرفان کے ساتھ نکاح قبول ہے ۔۔۔سجل نے آہستہ سے کہا قبول ہے۔۔۔

دوسری بار جب پوچھا۔۔۔

ادھر  ۔۔۔ساگر کے نمبر پہ میسج آیا ۔۔۔

جو دوسری کزن نے کیا تھا ۔۔۔ساگر ۔۔۔سجل تم سے بہت پیار کرتی ہے۔۔۔۔لڑکے والے لوگ بہت برے ہیں وہ سجل کو بہت دکھ دیں گے ۔۔سجل کی شرارتیں سجل کی مسکراہٹیں سب ختم ہو جائیں گی  ۔ساگر   سجل کو بچا لو۔۔۔

وہ تمہاری راہ دیکھ رہی ہے۔۔۔

یہ بھی پڑھیں اردو سچی کہانی رشتہ یہ وفا کا

سجل نے دوسری بار بھی قبول کر لیا ۔۔جب تیسری بار قبول کرنے لگج تو ۔۔۔

ساگر نے سجل کو آواز دی ۔۔۔

سجل نے ساگر کی جانب دیکھا۔۔۔

ساگر مسکرا کر بولا ۔۔۔اوئے ہٹلر ۔۔۔اداسی چھوڑ ۔۔۔اور بول کیا ساگر کی بیوی بنو گئ ۔۔۔سب ساگر کی جانب دیکھ رہے تھے ابو کچھ کہنے لگے ۔۔۔ساگر نے مسکرا کر کہا ابو اج نہیں۔۔پہلی بار آپ کا بیٹا کوئی اچھا کام کر رہا ہے ۔۔بہت مشکل سے ہمت آئی یے ۔

ابو آج نہ روکنا ۔۔۔۔سجل۔۔۔کچھ سمجھ نہیں پا رہی تھئ ۔۔

ساگر پاس گئا ۔۔سجل میری جنت کی ہمسفر بن جاو ۔۔۔

میں تم کو اللہ کو گواہ بنا کرسب کے سامنے قبول کرتا ہوں۔سجل رونے لگی ۔۔ساگر نے سینے سے لگا۔لیا۔۔۔

لڑکے والوں نے شور مچا دیا ۔۔۔

لڑکے کی ماں بولی 

۔۔مجھے تو پہلے ہی یہ بدکردار لگتی تھی ۔۔

سجل نے ساگر کی جانب دیکھا۔۔۔لڑکے کی ماں کو دھکا دیا۔۔جا جا ۔۔۔اہنے بیٹے کو دیکھ    اس کا منہ ایسا ہے جیسے قلفی ہوتی یے ۔۔۔بندر کہیں کا۔۔۔

سجل کی شرارتیں وہ لہجہ پھر لوٹ آیا تھا۔۔۔سجل ساگر کی بیوی بن گئی ۔۔۔

بہت خوش تھی۔۔بہت خوش ۔۔۔

ساگر نے اچھے وقت پہ اچھا فیصلہ کیا۔۔۔اور سجل کی زندگی فنا ہونے سے بچا لی۔۔۔

ساگر نے شہزادہ بن کر ۔۔۔سجل کی زندگی کو خوشیوں شے بھر دیا۔۔۔ساگر نے بتایا ۔۔۔کسی کے لیئے جینا ہی اصل زندگی ہے۔۔۔

سجل کا ہاتھ تھامے۔۔۔وہ دونوں ۔۔۔زندگی کو جنت بنا کر ایک دوسرے کی سانس میں سانس لے رہے ہیں۔۔

کسی کو دکھ دینے والے ۔۔۔ساگر بن کر ۔۔۔اپنی سجل کو خوشیوں سے سجا دو  

بہت سی سجل ایسی ہیں جو شادی سے پہلے بہت شرارتی تھیں لیکن شادی کے ۔۔۔وہ خاموش ہو چکی ہے وہ کہں کھو گئی ہیں۔۔وہ زندگی میں الجھ گئی ہیں۔۔۔اپنی سجل کو ۔۔۔محبت سے ۔۔اس کو پہلی سی شہزادی بنا دیں۔۔۔

یہ بھی پڑھیں اردو سچی کہانی دھڑکن رک نہ جائے



Post a Comment

0 Comments