Urdu Kahani Ketni giranen ab Baqi Hian | romantic urdu kahani | urdu kahani in urdu fount | intresting urdu kahani | اردو سچی کہانی گرہیں اب باقی ہیں

 کتنی گرہیں اب باقی ہیں

میرا بیٹا تھا وہ ۔۔۔۔ہاں میں نے جنم تو نہیں  دیا لیکن ۔۔۔۔اس کو میں نے سگی ماں سے بڑھ کر پیار دیا تھا۔۔۔۔بات کچھ یوں ہے  ۔ثمر کی ماں فوت ہو گئی ۔وہ ابھی دس سال کا تھا۔۔ماں کے جانے کے بعد ثمر بہت روتا تھا ۔۔۔۔کیوں کے وہ کھانا ماں کے ہاتھ سے کھاتا  تھا سوتا ماں کے پاس تھا ۔۔۔جب کے دس سال کا ہو چکا تھا۔ماں کے جانے کے بعد۔وہ ضدی سا ہو گیا تھا ۔۔اب اس کی دیکھ بھال اس کی بڑی بہن کرتی تھی ۔۔۔

ثمر اب سارا دن اکیلا بیٹھا رہتا ۔جب موقع ملتا تو ماں کی قبر پہ چلا جاتا بڑی بہن کہنے کو تو بہن تھی۔  لیکن وہ عجیب سی تھی  کچھ نفسیاتی بھی تھئ وہ ثمر کو چھوٹی چھوٹی بات پہ مارتی تھی ثمر کا دم گھٹنے لگا تھا اس گھر میں۔۔

دس سال کا ثمر ۔۔۔۔۔محبت کی تلاش میں تھا اسے مان کا سایہ  مل جائے   باپ زیادہ دھیان نہیں دیتا تھا ۔۔۔۔ثمر پہ 

وقت گزرنے لگا ۔۔۔ وہ سکول جاتا تھا۔۔۔۔

سکول میں اسے ۔۔۔۔ایک ماں مل گئی  ۔۔

ماں کوئی اور نہیں اس کی سکول ٹیچر تھی۔۔۔۔۔

ٹیچر کا کوئی بیٹا نہ تھا ۔۔۔۔ایک ہی بیٹئ تھی۔۔۔۔

Read this Urdu Kahani -  khawab haqeeqat bhi ho jain ge

شوہر  ڈاکٹر تھا ۔۔۔۔لیکن ظالم انسان تھا  ۔۔بہت ٹارچر کرتا تھا۔۔۔۔۔

خیر ۔۔وہ الگ ظلم کی داستان  ہے۔۔۔

ثمر گندے سے  کپڑے پہنے سکول ایا۔۔۔بال بکھرے ہوئے تھے۔۔۔

ٹیچر جانتی تھی ۔۔ثمر کی ماں فوت ہو چکی ہے۔۔۔

ٹیچر نے ثمر کو پاس بلایا۔۔۔۔۔

ثمر ڈرا سہما سا ۔۔چہرے پہ چوٹ کا نشان تھا ۔۔۔ٹیچر نے پوچھا کیا یہاں ۔۔۔۔

آہستہ سے بولا   وہ  نا  مجھے محلے کے ایک  لڑکے نے مارا ہے۔۔۔

ٹیچر کو وہ لمحہ یاد ایا۔۔۔ جب ایک بار کسی بچے نے ثمر کو مارا تھا تو ثمر  کی ماں دوسرے دن سکول پہنچ گئی تھی۔۔اور سب سے سختی سے کہنے لگی خبردار کسی نے میرے پتر کو کچھ کہا اب تو۔۔۔

لیکن آج چہرے پہ زخم کا نشان ہے لیکن کوئی   نہیں کہہ رہا میرے پتر کو کوئی نہ مارے۔۔۔۔

ٹیچر نے پاس بلایا  ۔۔۔اپنے بیگ سے ایک دوپٹہ نکالا  ۔اور ثمر کا چہرہ صاف کیا۔۔۔۔

پھر پیار سے سمجھانے لگی  ۔۔۔ثمر بیٹا ۔۔۔

تم مجھے ماما کہہ کا بلایا کرو۔۔۔

ثمر چپ ہو گیا ۔۔۔۔نظریں جھکا لیں۔۔۔۔میں نے اس کا ہاتھ پکڑا ۔ ۔۔اسے پانی کے نل  کے پاس لے گئی۔۔۔۔

اس کا منہ ہاتھ دھلائے۔۔۔۔۔

وہ بہت پیارا لگ رہا تھا ۔۔۔۔۔سکول سے چھٹی ہوئی۔۔۔وہ اپنے گھر چلا گیا۔۔۔۔۔

لیکن۔۔۔۔میں نہیں جانتی تھئ۔۔۔۔اس کی بہن۔۔۔۔اسے ٹارچر کرتی یے  ۔۔۔ثمر نے کھانا مانگا  تو جواب ملا اج نہیں بنایا ۔۔۔۔۔ضد کرنے لگا مجھے کھانا دو۔۔۔۔

بہن نے دو تھپڑ مارے ۔۔۔۔۔روتا ہوا سو گیا۔۔۔۔۔

دوسرے دن سکول آیا۔۔۔۔۔میں دوسری کلاس میں تھی۔۔۔۔

ثمر میری کلاس کے باہر ۔۔۔تھوڑا سا دور کھڑا ہوا مجھے دیکھ رہا تھا۔۔۔۔

میں نے اشارے سے اسے اپنی پاس بلایا۔۔۔۔۔

اس کے سر پہ ہاتھ رکھا۔۔۔۔پیار سے پوچھا کیا ہوا ہے۔۔۔۔پہلی بار اس نے۔۔۔مجھے ماما کہا۔۔۔۔۔۔

آہستہ سے بولا۔۔۔۔ماما میرے سر میں درد ہو رہا ہے۔۔۔

میں نے جب محسوس کیا تو اس کو بخار تھا  ۔۔۔

اور بہت تیز بخار تھا۔  ۔۔

میں  نے اسے اپنی کرسی پہ بٹھایا ۔۔۔۔

جلدی سے کلاس ختم کی۔۔۔۔اس کو لیئے ڈاکٹر پاس چلی گئئ۔۔۔۔

ثمر ۔۔۔کو 103 بخار تھا۔۔۔۔میں غصہ ہونے لگی۔۔۔۔بہن کو کو جب پتا تھا اتنا بخار یے تو سکول بیجھنے  کی کیا ضرورت تھی۔۔۔۔

میڈیسن لی۔۔۔۔۔اس کے ساتھ اس کے گھرچلی گئی۔۔۔۔

چونکہ۔۔۔۔ہم ایک ہی کالونی کے تھے۔۔۔۔۔

Read this Urdu Kahani- nazak larki

ثمر کے گھر پہنچی۔۔۔۔تو گھر میں ثمر کے بڑے بھائی بھی موجود تھے ۔۔میں نے ان کو صورتحال سے  آگاہ کیا۔۔۔اور سمجھایا کے ثمر کا خیال رکھا کریں  ۔۔۔۔

اتنا کہہ کر میں گھر لوٹنے لگی۔۔۔۔ثمر میری طرف حسرت بھری نگاہوں شے دیکھنے لگا۔۔۔۔

جب میں گھر آ گئ ۔۔۔۔تو اس کی بہن سوالات کرنے لگی ۔۔۔تم کیوں گئے  ۔۔ٹیچر کے ساتھ دوا لینے۔۔۔۔۔ثمر چپ رہا۔۔۔۔

1 سال گزر گیا تھا۔۔۔۔۔ثمر اب سکول اتا تو سب سے پہلے مجھے ملتا۔۔۔۔۔

وہ اب گیارہ سال۔کا ہو گیا تھا۔۔۔۔لیکن عجیب کام کرتا تھا۔۔۔گھر سے پراٹھا لے آتا تھا۔۔۔۔اور میرے ہاتھ سے کھاتا تھا۔۔۔۔

سکول میں آایک  دو بار۔۔۔۔پرنسپل نے مجھے منع کیا ۔۔۔۔سکول میں صبح صبح ۔۔۔۔تم اسے لیکر بیٹھ جاتی ہو یہ غلط بات ہے۔۔۔۔

میرا گھر پاس میں ہی تھا سکول سے۔۔۔۔

پھر ثمر کو میں  نے کہا۔۔۔۔تم گھر آ جایا کرو  ۔۔۔

اب ثمر بیگ لیئے ۔۔۔۔میرے گھر آ جاتا۔۔۔۔

میرے ہاتھ سے ناشتہ کرتا  ۔۔۔پھر۔۔۔میرے ساتھ ہی سکول جاتا۔۔۔

ثمر کو ماں کی محبت چاہئے تھی۔۔۔۔وہ میری تھوڑی سی توجہ سے اب خوش رہتا تھا۔۔۔۔۔

میں پیدل چل کر سکول جایا کرتی تھی۔۔۔۔

ایک دن مجھے کہنے لگا۔۔۔ماما آپ پیدل کیوں سکول جاتی ہیں۔۔۔۔آپ تھک جاتی ہیں ۔۔۔پہلی بار اس نے مجھے فکر  بھرے الفاظ کہے تھے  ۔  

میں نے سر پہ ہاتھ رکھا  مسکرا کر بولی۔۔۔جب میرا بیٹا بڑا جائے گا نا پھر اہنی بائیک لیں گے تم مجھے سکول چھوڑنے جایا کرنا ۔۔۔۔۔

وہ بہت خوش ہوتا ۔۔۔۔

ثمر۔۔۔۔اب سکول سے واپس آ کر میرے پاس ہی کھانا کھاتا پھر ۔ ۔اسے میں ٹیوشن پڑھاتی۔۔۔۔۔

وہ پڑھائی میں بہت اچھا تھا۔۔۔۔

لیکن ایک دن اس کی بہن اور اس کا باپ میرے گھر ایے۔۔۔مجھے منع کیا ۔۔۔ہمارے بچے سے دور رہو۔۔۔

لیکن ثمر کا باپ کچھ سمجھدار تھا  ۔۔۔میں نے اس سے کہا۔۔۔میں کچھ غلط تو نہیں کر رہی۔۔۔اس پڑھاتی لکھاتی  ہوں ایک ماں بن کر اس کی اچھی تربیت کرتی ہوں۔۔۔وہ بھی خوش رہتا یے ۔۔اس کو میں نے اپنا بیٹا بنایا ہے۔۔۔

آپ لوگ اگر چاہتے ہیں تو ٹھیک ہے میں اسے نہیں آنے دوں گی اہنے گھر۔۔۔۔

ثمر کا باپ کچھ بیمار تھا ۔۔۔۔اس نے مجھے کہا بہن۔۔۔۔ٹھیک ہے میرا پتر اپنی ماں کا بڑا لاڈلہ  تھا اس کا خیال رکھنا ۔۔۔۔

ادھر ثمر کی بہن کی شادی ہو گئی ۔۔۔اور اس کا شوہر گھر داماد بن گئا ۔۔۔

ایک سال گزرا۔۔۔۔۔اور ثمر کا باپ بھی دنیا سے چل بسا۔۔۔۔

ثمر اب ۔۔میرے پاس ہی زیادہ وقت گزرتا تھا۔۔۔۔۔

15 سال کا ہو چکا تھا  ۔۔۔۔میٹرک پاس کر لی۔۔۔۔۔

مجھے کہنے لگا  ۔۔ماما مجھے وکیل بننا ہے  ۔میں نے پیار سے کہا ٹھیک ہے میرے بچے۔۔۔۔

تم پہلے ایف ایس سی کر لو۔۔۔۔۔

اس کا ایک کالج میں ایڈمیشن کروا دیا۔۔۔۔کالج جانے لگا۔۔۔۔

کالج سے سیدھا میرے پاس آتا ا۔۔کھانا کھا کر کچھ ٹائم میرے پاس رہتا پھر اپنے گھر چلا جاتا۔۔۔۔

لیکن اس لی بہن ہمیشہ اس سے جھگڑا کرتی۔۔۔۔اسے کہتی 

Read this Urdu Kahani- Har kesi ko io dildar milta nahi

ٹیچر کے گھر جانا چھوڑ دو۔۔۔۔۔

لیکن ثمر اب جوان ہو چکا تھا   ۔۔وہ بہن سے کہتا ۔۔۔میری ماما ہیں وہ ۔۔۔ان کے بنا میں نہیں رہ سکتا اب۔۔۔

لیکن بہن نفسیاتی تھی۔۔۔۔وہ اسے نہ جانے کیسی کیسی غلیظ باتیں کہتی۔۔۔۔

ثمر سب کچھ مجھے بتاتا آ کر۔۔۔۔

میں اسے پیار سے سمجھاتئ۔۔۔۔اس کی اچھے سے تربیت کرتی۔۔۔۔۔

میں کرائے کے گھر میں رہتی تھی۔۔۔۔۔

کچھ پیسے جمع کر کے ایک پلاٹ خرید تھا۔۔۔۔

مالک مکان۔۔۔۔کبھی پانی بند کر دیتا تو کبھی بجلی۔۔۔۔کرائے لیٹ ہو جانے کی صورت میں۔۔۔۔۔

اب گھر کی ذمہ داری۔۔۔۔۔ثمر سنبھال رہا تھا۔۔۔میں 50  سال۔کی ہو چکی تھئ۔۔۔۔اور ۔۔۔۔ثمر 18 سال کا۔۔۔۔

ایک دن میرے پاس بیٹھا کہنے لگا۔ماما مجھے ایک جاب مل۔رہی ہے   آپ کی اجازت ہو تو کر لوں۔۔۔میں نے تو۔۔منع کیا۔۔۔کے پڑھائی پہ دھیان دو۔۔۔۔لیکن کہنے لگا ماما جان ۔۔۔آپ کب تک کریں ۔۔۔۔۔آپ اب تھک جاتی ہیں ۔۔۔۔

ثمر ایک ہوٹل پہ کام کرنے لگا پارٹ ٹائم۔۔۔۔۔۔

جو پیسے کماتا مجھے لا کر دیتا۔۔۔میں اسے کہتی۔۔۔۔میرے بچے۔ ۔تم اپنے پاس رکھا کرو  ۔۔

لیکن وہ ضد کرتا نہیں ماما جان ۔۔۔۔

میں اس کے پیسے الگ سے جمع کرنے لگی۔۔۔۔۔

ایف ایس سی مکمل ہوئی۔۔۔۔تو کہنے

لگا وکالت میں داخلہ لے دیں۔۔۔

میں بہت خوش تھی۔۔۔۔میرا  بیٹا وکیل بننے جا رہا ہے۔۔۔۔

اب سکول سے ریٹائر ہو گئی تھی۔۔۔۔

ثمر ۔۔۔۔بہت خوش تھا۔۔۔۔

مجھے کہنے لگا۔۔۔ماما جان آپ بلکل پریشان نہ ہوا کریں۔۔۔

اب ہم اپنا گھر بنا لیں گے۔۔۔۔مجھے جو پینشن ملی اس سے اپنا گھر بنایا ۔۔دو کمرے ۔۔۔

گھر کا سارا کام ۔۔۔۔۔خود ۔۔۔ثمر نے کیا۔۔۔۔وہ مجھے کچھ بھی کام نہ کرنے دیتا ۔۔۔مجھے کہتا ۔۔۔ماما وہاں مرد آئے ہوتے ہیں آپ نہ آیا کریں وہاں۔۔۔

میری بیٹی۔۔۔جسے وہ چھوٹی کہتا تھا۔۔۔ا بہن سے بھی بڑھ کر چاہتا تھا اسے کہتا تھا۔۔۔چھوٹی ۔۔۔ماما کو کوئی کام نہ کرنے دیا۔۔کرو۔۔۔

میں بہت خوش ہوتی تھی۔۔۔۔اللہ نے مجھے بیٹا عطا کیا ۔۔۔

لیکن  ایک بات ابھی بھی بچوں والی تھی اس کی ۔۔۔18 سال کا ہو چکا تھا  ۔لیکن ۔۔۔کھانا میرے ہاتھ سے ہی کھاتا تھا۔۔۔۔۔

گھر بن کر مکمل ہو گیا تو بہت خوش تھا۔۔۔۔سارا سامان خود شفٹ کیا اپنے گھر میں۔۔۔۔

اس نے اپنے کچھ پیسے جمع کر کے ایک بائیک بھی خرید لی تھی۔۔۔۔۔۔

بہت خوش تھا   

Read this Urdu Kahani   Mohabbat ka safar

لیکن ایک دن میرے پاس آیا   تو کچھ پریشان سا تھا  ۔۔مین ے جب پوچھا تو رونے لگا۔۔۔

میری بڑی بہن نے گھر جائیداد سب اپنے اور اپنے شوہر کے نام کروا لی ہے۔۔۔۔۔

اور۔۔۔۔۔اب وہ ہمیں گھر میں نہیں رکھنا چاہتی ۔۔۔۔

میں نے ثمر کو پیار سے سمجھایا ۔۔۔۔پریشان  نہ ہو۔۔۔۔

ثمر 5 وقت نماز ادا کرتا تھا  ۔۔۔۔

ہر کوئی اس کی تعریف کرتا۔۔۔اس کا اخلاق ہر کسی  کے ساتھ دوستانہ تھا۔۔۔۔۔

ہاں کبھی کبھی میں اسے کسی بات پہ ڈانٹ بھی دیتی تھی۔۔۔پھر۔۔۔مسکرا کر کہتا۔۔۔ماما غصہ آپ پہ بلکل اچھا نہیں لگتا ۔۔۔پھر اپنی غلطی کی معافی بھی مانگتا۔۔۔۔۔

ثمر نے مجھے زندگی دی تھی۔۔۔۔۔

میرا بہت خیال رکھتا ۔۔۔۔ایک دن میں۔۔۔۔۔نعت رسول اللہ صلی اللہ علیہ والہ وسلم  سن رہی تھی ۔۔ 

تو میری آنکھوں سے آنسو بہنے لگے ۔ ۔

ثمر پاس بیٹھا پڑھ رہاتھا ۔۔۔میں آہستہ سے بولی۔۔۔۔اللہ کبھی بھی بلائے گا نا۔۔۔۔۔مدینے۔۔۔۔

مسکرا کر بولا۔۔۔۔۔ماما جان ۔۔۔۔بس وکیل بن لینے دیں  آپ سے وعدہ رہا۔۔۔۔ہم مل کر ۔۔۔عمرہ کرنے جائیں گے ۔۔

ثمر کی باتیں میرے دل کا سکون تھیں۔۔۔۔

میری ڈھال بن گیا تھا۔۔۔۔۔۔چھوٹی بہن کو۔۔۔کبھی اکیلے باہر نہ جانے دیتا  ۔۔ 

اس کی عمر ۔اب۔۔۔انیس سال ہو چکی تھی۔۔۔۔۔۔

میں بیمار رہنے لگئ۔۔۔۔میری ہائی بکڈ پریشر ہو گیا۔۔۔۔

ثمر مجھ سے غصہ ہونے لگا  ماما کتنی بار کہا ہے   کچھ نہ سوچا کرو۔۔۔۔اللہ ہمارے ساتھ ہے  نا۔۔۔۔۔

آپ کیوں پریشان  ہوتی ہیں ۔۔۔۔ثمر پانچ وقت  نماز ادا کرتا تھا۔۔۔۔۔

جب میں ایک دن بہت بیمار ہو گئئ۔۔۔۔میرا سر اپنی گود میں رکھا    سر دبا رہا تھا   ۔۔اور ڈاکٹرز سے کہہ رہا تھا ۔۔۔ڈاکٹر صاحب میری ماما کو مجھ سے اب جدا نہ کرنا ۔۔۔میں اپنی ماما کے ساتھ جینا چاہتا ہوں۔۔۔۔

میری بہت فکر کرتا تھا۔۔۔۔

اور سچ بتاوں تو۔۔۔اس کا اتنا احساس دیکھ کر ہی میں تندرست ہو جاتی تھی۔۔۔۔۔

پھر مجھے یاد ایا۔۔۔۔جب میرا شوہر ۔۔۔مجھ پہ تشدد کرتا تھا۔۔۔۔مجھے بہت مارتا تھا۔۔۔۔۔کیوں کے اسے کوئی اور پسند ا گئی تھی اور مجھ سے جان  چھڑانا چاہتا  تھا۔۔۔

پھر آخر مجھے طلاق دے کر ۔۔۔۔۔سرخرو ہو گیا۔۔۔۔

میں ثمر کو سمجھایا کرتی تھی۔۔۔۔۔میرے بچے   مرد کی خوبصورتی کیا ہوتی ہے جانتے ہو    

تو ثمر چپ ہو گیا۔۔۔۔

میں نے اسے بتایا۔۔۔۔۔مرد کا حسن اس کا اخلاق ہے۔۔۔۔

مرد کی اصلیت جاننی ہو تو ۔۔۔دیکھو کے اس کا اپنی بیوی کے ساتھ کیا رویہ ہے  ۔۔۔اگر تو وہ بیوی کو گالیاں دیتا مارتا پیٹتا ہے تو ۔مرد نہیں بے ضمیر کتے ہوتے  ییں  ۔۔

اور خوبصورت مرد ۔۔۔خوبصورت اخلاق کے مالک ہوتے ہیں۔۔۔۔وہ اپنی بیوی کو ۔۔۔۔اگر سر تاج نہیں کہتے تو ہ

پاوں کا جوتا بھی نہیں سمجھتے۔  ۔اپنی بیوی کی عزت کرتے ہیں۔۔۔اور ایسے مرد   ۔۔ شہزادے ہوتے ہیں۔۔۔

میں جو اسے سمجھانا چایتئ تھی۔۔وہ خوب سمجھ جاتا تھا۔۔۔۔

اور کہتا ۔ماما جان    آپ کی تربیت کا یہ بھرم رکھوں گا    کبھی آپ کا سر نہ جھکنے دوں گا۔۔۔۔

اس کا سال کا پہلا روزہ تھا۔۔۔۔۔مجھے کہنے لگا امی۔۔جان آپ بریانی بنانا اج ۔۔۔۔

میں افطاری ٹائم آوں گا ۔۔۔

Read this Urdu kahani -  ishq meri pooja

وہ اپنے گھر چلا گیا ۔۔۔۔جب گھر پہنچا۔۔۔۔۔اس کی بہن اسے سے جھگڑنے لگی ۔۔۔۔

اتنا جھگڑا ہوا کے اس کی بہن اور بہنوئی نے اسے بہت مارا۔۔۔۔

بہن اسے نازیبا الفاظ کہنے لگی    تم نے ماں کے نام پہ معشوقہ رکھی ہوئی ہے۔۔۔۔

تم ماں کے رشتے کو داغ لگا رہے ہو۔۔۔۔تم بے غیرت انسان  ہو۔۔۔

ثمر چلا کر بولا۔۔۔باجی اللہ کا واسطہ ہے ایسا نہ کہو ۔۔۔وہ میری ماں ۔۔۔۔ماں کے بارے ایسا نہ بولو۔۔۔۔

بہن کی آواز سن کر محلہ اکھٹا  ہو گیا۔۔۔

بہن سارے محلے والوں سے کہنے لگی۔۔۔۔یہ کافر ۔۔۔ماں کے نام پہ عشق کرتا یے   ۔

جب ثمر نے یہ الفاظ سنے  تو وہ بے ہوش ہو کر ۔۔زمین پہ گر گیا۔۔۔۔۔

ہسپتال لے گئے۔۔۔۔

میں بریانی بنا کر انتظار کر رہی تھی۔۔۔۔۔

لیکن ثمر نہ ایا۔۔۔۔۔

میرا دل گھبرانے لگا ۔۔۔۔میں نے جب پتہ کیا تو خبر ملی۔۔۔۔ہسپتال میں ہے    ۔اسے ہارت اٹیک آیا ہے۔۔۔میں دوڑتی چلی گئی۔۔۔۔بے ہوش  پڑا تھا۔۔۔میں رونے لگی۔۔۔۔

اس کی بہن نے ہسپتال میں بھی خوب تماشہ لگایا۔۔۔میری بہت بے عزتی کی۔۔۔مجے طرح طرح کے طعنے دیتی رہی۔۔۔مجھ دھکے دے کر وہاں سے نکال دیا۔۔۔

میں پریشان رہنے لگی ۔۔۔

4 دن گزر۔۔۔۔میرے ثمر کی کوئی خبر نہ تھی۔۔۔۔

پھر ایک دن مجھے فون کیا۔۔۔

ثمر کی آواز تھی۔۔۔۔۔

ماما جان ۔۔۔آپ کا بیٹا مر رہا ہے اپ کہاں ہیں۔۔۔میں تڑپنے لگی ۔۔۔بیٹا میں تیرے پاس ہی ہوں 


مسکرا کر بولا۔۔۔ماما کل میں نے روزہ رکھنا ہے۔۔۔

آپ میرے لیئے چکن رول بنا کر لانا۔۔۔۔

ضرور لے کر انا۔۔۔۔

میں نے پیار سے کہا میرا بیٹا تم اپنا خیال رکھو میں کل آوں گی ۔۔۔۔

دوسرے دن ۔۔۔افطاری کے وقت میں ثمر کے لیئئ بریانی اور چکن رول لے کر گئی۔۔وہ گھر ہی تھا۔۔۔

جب میں گھر میں داخل ہوئی۔۔۔

وہ دوڑتا ہوا میرے سینے سے آ لگا۔۔۔ماما جان  ۔۔میں مر جانا یے اب ۔۔۔میں رونے لگی ایسی باتیں نہیں کرتے۔۔۔۔

اتنے میں اس کی بہن  ا گئ ۔مجھے دیکھ کر چلانے لگی۔۔۔

ہائے ۔۔۔نہیں رہا گیا عاشق کے بنا ۔۔۔۔

آ گئی ملنے۔۔۔۔وہ پھر اپنی حد سے گزرنے لگی۔۔۔۔

ثمر نے اپنی بہن کی طرف دیکھا۔۔۔اور آہستہ سے بولا۔۔۔۔۔

اللہ کا واسطہ دیتا ہوں باجی۔۔۔۔۔۔۔

اتنا کہا اور ۔۔۔ثمر  زمین پہ گر گیا۔۔۔۔۔

اس کا جسم ٹھنڈا پڑ گئا تھا۔۔۔۔۔۔

Read this Urdu kahani  Maan ki fariad

جلدی سے ہسپتال لے گئے۔۔۔۔۔اور پھر    ڈاکٹرز ۔نے ۔۔۔۔

آخری الفاظ کہے ۔۔۔۔

He Is no More.............

اور میرے پیروں تلے سے زمیں نکل گئی۔۔۔۔

ثمر مر چکا تھا۔۔۔۔وہ مجھے آواز دیتا ۔۔۔مجھے  ماما جان کہتا ہوا ۔۔۔مجھ سے جدا ہو گیا تھا۔۔۔۔۔

مجھے ہر مشکل میں حوصلہ دینے والا میرا بیٹا مجھے ہمیشہ کے لیئے چھوڑ گئا تھا۔۔۔۔

بہن ۔۔۔۔دور کھڑی۔۔۔۔آنسو بہا رہی تھی  ۔۔۔۔

وہ رونے کی ایکٹنگ کرنے لگی۔۔۔۔۔

میں نے ثمر کے ماتھے پہ بوسہ کیا۔۔۔۔۔

ثمر جیسے مجھے کہہ رہا ہو۔۔ماما مجھے چھوڑ کر نہ جانا ۔۔۔میں آپ کے ساتھ ہوں ہمیشہ۔۔۔۔۔

میں بوجھل قدموں  سے وہاں سے چل دی۔۔۔۔

اس کی بہن چیخ چیخ کر رو رہی ۔۔تھئ۔۔۔۔

میرا دل چاہا اس آگ لگا کر جلا دوں ۔۔لیکن میں بے بس تھی۔۔۔

میں پھر تنہا بوڑھے قدم لیئے۔۔۔گھر کی جانب چل دی۔۔۔۔

اس کی قبر پہ بیٹھی ہوں۔۔۔آنکھوں میں آنسو ہے۔۔۔اس رمضان 15 روزے کو وہ ہمیشہ کے لیئے بچھڑ گئا۔ ۔۔

پھر سچ یہ کھلا مجھ پہ۔۔۔۔۔

کے ثمر اپنی بہن سے جائیداد میں حصہ مانگ رہا تھا۔۔۔۔۔

اور بہنوئی اپنی بہن کے ساتھ ثمر کی شادی کروانا چاہتا تھا۔۔۔

اور ہھر۔۔۔۔بہن جلاد بن گئ۔۔۔۔اہنے بھائی کو کھا گئی۔۔۔

میں نے اسے بیسک جنم نہیں دیا تھا لیکن میرا اللہ جانتا ہے سگی ماں سے بڑھ کر اسے اپنا مانا تھا۔۔۔۔

بہن کا لالچ ۔۔۔۔اور پاگل پن  ۔۔میرے ثمر کو فنا کر گیا۔۔۔۔

سب بہنیں ایک جیسی نہیں ہوتیں بہنیں تو بھائی پہ قربان ہو جاتی ہیں۔۔۔

لیکن یہ کیسی بہن تھی     جو اپنے بھائی کی قاتل بن گئی۔۔۔۔

عورت ۔۔۔۔بہت ظالم بھی ہو سکتی یے۔۔۔۔۔

جیسے میرے ثمر کی بہن ۔۔۔۔جس نے ہنستے مسکراتے ثمر کو خاک کر دیا۔۔۔۔

بہت سی عورتیں۔۔۔۔۔اپنوں کی قاتل ہوتی ہیں ۔۔۔

کچھ ۔۔۔شوہر کا قتل کرتی ہیں محبوب سے مل کر۔۔

کچھ ماں باپ کو رسوا کرتی ہیں محبت کے نام پہ۔۔

کچھ بہن کے روپ میں قاتل بن جاتی ہیں۔۔۔۔

اور شاید آج مجھے محسوس ہو رہا ہے۔۔۔۔یہ دنیا فنا کے قریب ہے۔۔۔رشتوں میں اب محبت نہیں رہی۔۔۔

اب ہر منزل مطلب کی ہے ۔۔۔اب ہر تعلق مطلب کا ہے۔۔اب ہر رشتہ مطلب کا ہے ۔۔۔

اب کس پہ یقین کریں  کسے اپنا کہیں۔۔۔۔۔

سنا یے اس کی بہن اب سکتے میں ہے۔۔۔

اسے کوئی کہو جا کر   تمہارا ڈرامہ ختم ہو جائے تو اللہ کے انصاف کا انتظار کرے۔۔۔۔

خدارا ۔۔۔۔۔جینے دو ایک دوسرے کو۔۔۔۔۔کیوں کیسے۔۔۔۔کچھ لوگ۔۔۔درندگی کی ہر حد پار کر دیتے ہیں۔۔۔صرف اپنے مطلب کی خاطر۔۔۔۔۔

آپ سب سے دعا ہے ۔میرے بیٹے ثمر کے لیئے دعا کرنا۔۔۔۔

مجھے یوں لگتا ہے۔۔۔۔وہ ابھی آئے گا اور کہے گا ماما جان نہ روئیں  میں زندہ ہوں  ۔

میں لاوارث بے بس زندگی سے 

ہاری ہوئی لاوارث ماں۔۔۔۔۔

کتنی گرہیں اب باقی ہیں

اجازت چاہتی ہوں۔۔۔۔۔

Read this Urdu kahani - Rishta Ye Wafa Ka



Post a Comment

0 Comments