urdu kahani mohabbat ka safar | intresting urdu kahani | heart touching urdu kahani in urdu fount | اردو سچی کہانی محبت کا سفر

 محبت کا سفر

اپنے لیئے تو ہر کوئی جیتا ہے۔۔

ہر کسی کو اپنے فیوچر کی فکر ہوتی ہے۔۔

کوئی اچھی نوکری کے لیئے پریشان ہے کوئی اچھی تنخواہ کے لیے۔۔

کوئی نئی کار لینا چاہتا ہے کوئی نئی سائیکل ۔۔

کسی کو برگر پیزے کے مزے لوٹنے ہیں۔۔کوئی ایک وقت کی روٹی کے لیئے تڑپ رہا ہے۔۔۔۔


 ۔۔۔کچھ دن پہلے کی بات ہے۔۔۔۔

میں اپنے کمرے میں بیٹھا لکھ رہا تھا ۔۔۔۔نیند سے آنکھیں بوجھل تھیں۔۔۔۔

اتبے میں فون کی گھنٹی بجی۔۔۔۔کانپتی ہوئی آواز میرے کانوں میں گونجی۔۔۔۔

فارس سر۔۔۔۔۔

میں نے عینک اتاری۔۔۔۔حیران ہوا ۔۔ٹائم دیکھا۔۔۔رات کا ایک بج چکا تھا ۔۔۔

جی کون۔۔۔۔کیا آپ فارس سر ہیں۔۔۔۔

میں نے ہاں میں جواب۔۔۔

سر ۔۔۔اللہ کے لیئے میری مدد کریں ۔۔۔میں نے پوچھا کیا ہوا۔۔۔

سر۔۔۔۔میرا شوہر فوت ہو چکا ہے۔۔میں بہت غریب ہوں ۔۔۔اتنی غریب کے میرے حالات میری بھوک میری پیاس ۔۔میری گزرتی راتیں میرے گزرتے دن ۔۔۔صرف میرا اللہ جانتا ہے۔۔۔

میں نے پوچھا کیسی مدد چاہئے آپ کو۔۔۔

سر۔۔۔میری بیٹی 12 سال کی ہے۔۔۔۔وہ کھانا بنا رہی تھی۔۔۔کھانے بناتے ہوئے کب اس کے کپڑوں کو آگ لگ گئ پتہ نہیں چلا ۔سر وہ ساری جل چکی ہے۔۔۔۔

میں اس کو لیکر ہسپتال آئی ہوں  میری کوئی مدد نہیں کر رہا  نہ کوئی میکہ والے نہ سسرال والے۔۔

میری بیٹی میری آنکھوں کے سامنے مر رہی ہے۔۔فارس سر میری بیٹی کو بچا لیں  ۔۔۔

ڈاکٹر آپریشن کے لیئے 70 ہزار مانگ رہے ہیں میرے پاس صرف 20 ہزار ہے۔۔۔

میری بیٹی کو بچا لیں ۔۔وہ رو رہی تھی۔۔۔۔

میں۔۔۔۔۔نے حوصلہ دیا۔۔اس کو پوچھا کس ہسپتال ہو۔۔اس نے ڈریس دیا۔۔۔لاہور کا ایک نجی ہسپتال تھا۔۔۔

میرا اللہ جانتا ہے۔۔۔ان دنوں میرے خود کے حالات ایسے تھے ۔۔کے میرے پاس صرف 5 ہزار روپے تھے ۔۔۔

میں بہت پریشان ہوا۔۔۔۔۔

کیا کروں۔۔۔کس سے مانگوں۔۔کیسے سے کہوں ۔۔

میں نے سوچا۔۔۔فیسبک پیج پہ۔۔۔اپنے چاہنے والوں سے۔۔۔مدد مانگتا ہوں۔ لیکن پھر خیال آیا۔۔۔۔کیا پتہ کوئی مدد کرے نا کرے۔۔۔خیر۔۔۔ہمارا اللہ مددگار ہے۔۔

۔۔۔میرے کچھ پرسنل مسائل تھے۔۔۔۔جس کی وجہ سے۔۔میرے اپنے حالات خراب تھے۔۔۔

پھر جب کوئی راستہ نظر نہ ایا۔۔۔

تو میری نظر اپنے موبائل پہ پڑی۔۔۔۔

یہ بھی پڑھیں اردو سچی کہانی  عشق میری پوجا

صبح میں پہلی فہرست میں ایک شاپ پہ گیا۔۔اپنا موبائل بیچ دیا۔۔۔۔ایک سستا سا نوکیا موبائل لے لیا۔۔

اس بہن کو فون کیا۔۔میں نے اپنا ایک ٹیم ممبر پیسے دے کر بیجھ دیا۔۔۔

اس لڑکی ۔۔۔کی یہاں تک ہو سکی مدد کی۔۔۔

ڈاکٹرز سے بات کی ۔۔۔۔آپریشن کے پیسے جمع کروائے۔۔۔دوسرے دن ۔۔۔اس کی بیٹی کا آپریشن ہو گیا۔۔۔

وہ بہت خوش تھی۔۔۔۔۔

مجھے فون کیا ۔۔۔رونے لگی۔۔۔فارس سر۔۔۔میری بیٹی کا آپریشن ہو گیا۔۔۔ڈاکٹر کہہ رہے ہیں اب انشاءاللہ ٹھیک ہو جائے گی۔۔۔

میں نے دعا دی۔۔۔۔

دوسرے دن میں آفس گیا۔۔۔مجھے موبائل پہ کچھ کام کرنا تھا ۔۔۔میں زیادہ تر میل وغیرہ موبائل سے کرتا تھا۔۔

میں بہت بے بس ہو گیا تھا ۔۔۔نوکیا سادہ سا موبائل تھا پاس۔۔میری بے بسی کی انتہا تھی۔۔۔

پھر اللہ کا شکر ادا کیا۔۔۔اے اللہ میرے لیئے اتنا کافی ہے کے۔کسی ۔۔بے سہارا کی زندگی بچ گئ۔۔۔

میرے دس دن بنا موبائل بہت مشکل کے گزرے تھے ۔۔

میں چاہتا تو۔۔۔کسی دوست سے پیسے لے لیتا۔۔۔لیکن۔۔۔۔

میرے اللہ نے میری عزت کا بھرم رکھا ہوا ہے۔۔۔

خیر ۔۔پھر اللہ نے کرم کیا۔۔۔ایک ٹی وی چینل نے مجھ سے رابطہ کیا۔۔۔۔

میرے لکھے ہوئے کچھ ناولز وہ خریدنا چاہتے تھے۔۔۔۔

میری سوچ سے زیادہ پیسے اللہ نے عطا کر دیئے ۔۔

میں مسکرانے لگا۔۔۔۔

اللہ کی رحمت کا سایہ جسے نصیب ہو اسے بھلا کس چیز کہ کمی ہو سکتی۔۔

میں نے نیا موبائل پھر سے خرید لیا۔۔۔الحمدللہ۔۔حالات پھر ۔۔اپنے معمول پہ اگئے۔۔۔پھر ۔۔۔میں خود ۔۔اس لڑکی سے ملنے گیا۔۔۔

کچا سا گھر تھا۔۔۔بارش برس رہی تھی۔۔۔

چھت سے پانی ٹپک رہا تھا۔۔۔

وہ لڑکی اپنے بیٹی کے پاس بیٹھی تھی۔۔۔

میں نے سلام کیا۔۔۔

اس کی بیٹی۔۔۔جو جل چکی تھی۔۔اب ماشااللہ ٹھیک تھی۔۔

میں نے نے سر پہ ہاتھ پھیرا۔۔۔۔

وہ میری طرف دیکھ کر بولی۔۔۔آپ فارس چاچو ہیں میں نے ماتھے پہ بوسہ کیا۔۔جی بیٹا۔۔وہ بچی میرے سینے سے لگ گئی۔۔چاچو۔۔۔ماما کہتی ہیں پا فرشتہ ہیں۔۔۔

میں مسکرایا ۔۔نہیں بیٹی۔۔فرشتہ کا مقام بہت افضل ہے۔۔۔فارس تو ایک۔۔۔۔عام سا انسان ہے۔۔

میں نے پوچھا سکول جاتی ہو۔۔۔

مسکرانے لگی۔ہاں نا چاچو۔۔میں سکول جاتی ہوں ۔۔

میں ہر کلاس میں فرسٹ آتی ہوں ۔۔۔۔یہ دیکھیں میرے سب انعام۔۔۔

میں بڑی ہو کر ۔۔ڈاکٹر بنوں گی۔۔۔

وہ بچی باتیں کر رہی تھی۔۔۔خدا کی قسم میری روح میں ٹھنڈک پہنچ رہی تھی۔۔۔۔

کیا فرق پڑا ۔۔۔ایک موبائل بیچا   کچھ دن۔۔۔مشکل میں گزارے۔۔

لیکن ۔۔۔۔پھر۔۔۔۔ایک زندگی ۔۔۔بچ گئی۔۔۔ایک گھر میں خوشیاں مہکنے لگیں۔۔۔

ایک ماں کی آغوش آباد رہی ۔۔۔ایک شہزادی گلاب کی مانند خوشبو بکھیرنے لگی۔۔۔۔

میں نے اجازت لی۔۔۔اور اس لڑکی کے سر پہ ہاتھ پھیرا۔۔میری بہن ۔۔فارس ۔۔۔کے لیے دعا کرنا ۔۔۔اللہ مجھے ایسے ہی پھر کسی بے سہارا کے آنسو کو مسکراہٹ میں بدلنے کی توفیق دے۔۔۔وہ لڑکی۔۔۔میرے پیروں سے لپٹ جانا چاہتی تھی۔۔۔مجھے نہ جانے کتنی دعائیں دے رہی تھی۔۔۔

فارس بھائ ۔۔۔میری بیٹی کو بچانے کا شکریہ۔۔میں نے استغفراللہ کہا۔۔۔

سب کچھ اللہ کی ذات کرنے والی۔۔فارس کی کیا اوقات۔۔۔

میں نے اجازت لی۔۔چل دیا۔۔۔

اور رسول اللہﷺ کا فرمان ہے : وَمَنْ یَّسَّرَ عَلٰی مُعْسِرٍ ‘ یَسَّرَ اللّٰہُ عَلَیْہِ فِی الدُّنْیَا وَالْآخِرَۃِ ’’اورجو شخص کسی تنگدست پر آسانی کرے گا‘اللہ تعالیٰ دنیا و آخرت میں اس کے لیے آسانی فرمائے گا ‘

بس۔۔۔۔پھر کیا ہوا۔۔مجھے اللہ نے نیا موبائل بھی عطا کر دیا۔۔۔مجھے لاکھوں کا کنٹریکٹ مل گیا۔۔۔

میری سب پریشانیاں ختم ہو گئیں۔۔

ایک زندگی بھی بچ گی۔۔ایک گھر ماں کی گود بھی آباد رہی ۔۔۔

ہزاروں خرچ کرتے ہو ۔۔۔۔کبھی نظر اٹھا کر دیکھنا۔۔۔اپنے ارد گرد۔۔۔کوئی ۔۔۔کسی مشکل میں ہوا۔۔تو۔۔۔اس کی مدد کر دینا ۔۔خدا کی قسم۔۔۔اللہ ایک روپے کے بدلے آپ کو ایک ہزار واپس لوٹا دے گا۔۔۔

لوگوں کے لیئے آسانیان پیدا کرو۔۔۔حسد اور نفرت سے دور رہو۔۔۔ایک بار فارس کے نظریئے سے سوچ کر دیکھو۔۔۔۔۔تڑپتی ہوئی روح کو سکون مل جائےگا ۔۔ہر مشکل آسانی میں بدل جائے گی۔۔۔

شہزادہ فارس ۔۔کی تحریر سے اگر کسی ایک  نے بھی کسی کو زندگی عطا کر دی ۔۔۔تو فارس کا مقصد پورا ہو جائے گا۔۔۔

طلاق دیتی ہوئی زبان ۔۔

زمین کے نام پہ ۔جھگڑتے ہوئے بھائ 

انا کی جنگ میں جلتے ہوئے اپنے۔

چلو سب ایک دوسرے سے تلخیاں مٹا کر۔۔۔ایک دوسرے کو خوشیاں  عطا کر دیں ۔۔۔



Post a Comment

0 Comments