Kisee nazar ko mera entazar urdu kahani | Urdu Stories in urdu fount | Sachi kahani urdu kahaniyan | Islamic Stories

 

کسی نظر کو میرا انتظار تھا ہی نہیں


کسی بھی عاقل و بالغ لڑکے یا لڑکی پر نکاح کے سلسلے میں جبر نہیں کیا جاسکتا۔ قرآنِ مجید میں اللہ تعالیٰ کا ارشاد ہے:


فَانْكِحُوا مَا طَابَ لَكُمْ مِنَ النِّسَاءِ.


تو ان عورتوں سے نکاح کرو جو تمہارے لئے پسندیدہ اور حلال ہوں۔


النساء، 4: 3


اور حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:


لَا تُنْكَحُ الْأَيِّمُ حَتَّى تُسْتَأْمَرَ وَلَا تُنْكَحُ الْبِكْرُ حَتَّى تُسْتَأْذَنَ.


"نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا: غیر شادی شدہ کا نکاح اس سے پوچھے بغیر نہ کیا جائے اور کنواری کا بغیر اجازت نکاح نہ کیا جائے"۔


بخاری، الصحيح، كتاب النكاح، باب لا ينكح الأب وغيره البكر والثيب إلا برضاها، 5: 1974، رقم: 4843، بيروت: دار ابن کثير اليمامة


عشنا  نے بی اے تعلیم مکمل کی ۔۔۔۔۔اب وہ آگے مزید پڑھنا چاہتی تھی لیکن ۔۔۔۔۔گھر کے حالات کچھ ایسے تھے کے نہیں پڑھایا جا سکتا تھا ۔۔۔

عشنا ۔۔۔3 بہنیں۔۔۔3 بھائ تھے۔۔۔۔باپ دنیا سے چل بسا تھا۔۔۔

ماں حیات تھی ۔۔۔۔

عشنا ۔۔۔۔کی زندگی۔۔۔۔۔

بے حد حسین جمیل لڑکی ۔۔اللہ پاک نے بے پناہ خوبصورت بنایا تھا۔۔۔۔

گورا سا رنگ تھا ۔۔۔بڑی بڑی آنکھیں۔۔۔۔خوبسیرت بھی تھی ۔۔۔

بھائی بڑے تھے سب کی شادی ہو چکی تھی ۔۔بہنوں کی بھی شادی ہو چکی تھی 

۔۔اب بس عشنا رہ گئی تھی ۔۔۔عشنا گھر میں فارغ تھی تو ۔۔سوچا کیوں نا قرآن مجید کا ترجمہ پڑھ لیا جائے۔مدرسہ جا کر۔۔

امی سے اجازت لی تو ۔۔ماں نے کہا ٹھیک ہے بیٹی۔۔۔کر لو۔۔۔۔

عشنا بہت خوش تھی ۔۔۔وہ مدرسہ جانے لگی۔۔۔اور اس نے 6 ماہ میں ترجمہ تفسیر کر لیا۔۔۔

اب عشنا ۔۔۔باحجاب  با پردہ رہنے لگی تھی ۔۔۔

پھر کچھ یوں ہوا۔۔۔۔عشنا کا دل ۔۔۔کسی کے لیئے  ۔۔دھڑکنے لگا۔۔

وہ محلے کا لڑکا ۔۔۔جس کا نام ساحل تھا ۔۔۔۔

ساحل ۔۔کوئی پیارا یا پڑھا لکھا یا کوئی  اچھی جاب نہیں کرتا تھا ۔۔۔نہ جانے کیوں عشنا کو  ساحل اچھا لگنے لگا۔۔۔

دونوں۔۔پہلے تو نگاہوں ہی نگاہوں سے ملاقاتیں کرنے لگے ۔۔کبھی عشنا نے دروازے پہ کھڑے ہونا ۔۔۔اور گلی سے گزرتے ہوئے۔۔۔ساحل نے دیکھ لینا ۔۔

اور کبھی۔۔۔چھت پہ کھڑے اشاروں سے باتیں ۔۔۔

رفتہ رفتہ۔۔۔۔۔وہ قریب آتے گئے۔۔۔۔

محبت کا دیہ ۔۔۔روشنائی دینے لگا۔۔۔

دل میں  خوشبوئے محبت ۔۔۔۔مہکنے لگی۔۔۔۔

پھر پہلی بار۔۔۔۔چاند رات۔۔۔عید سے ایک رات پہلے۔۔۔

ساحل ہاتھ میں چوڑیاں لیئے ۔۔۔۔

عشنا کو بلا رہا تھا۔۔۔

عشنا دبے پاوں دروازے پہ آئی۔۔۔۔۔ساحل نے جلدی سے عشنا کا ہاتھ پکڑا اور ہاتھ پہ ایک بوسہ کیا۔۔

دل زور زور سے دھڑکنے لگا۔۔۔عشنا نے گفٹ لیا اور کہا۔۔۔اب جاو۔۔۔اور ہاں یہ میرا فون نمبر ۔۔۔ٹھیک  ہے۔۔

ساحل مسکراتے ہوئے ۔۔چلا گیا۔۔۔۔

عید کے دن ۔۔۔عشنا سج سنور کر ۔۔۔۔چوڑیوں کی خوبصورتی پائل کی چھنکار۔۔۔۔۔گلی سے گزر کر اپنے چاچو کے گھر جا رہی تھئ ۔۔۔۔

ساحل سامنے کھڑا دیکھ رہا تھا ۔۔۔عاشق جب ۔محبوب کو دیکھے تو وہ ۔۔۔زمانے کو بھول جاتا ہے۔۔اور محبوب کی آنکھوں میں فنا ہو جاتا ہے ۔۔۔

محبت آہستہ آہستہ ۔۔۔۔۔سفر طے کرنے لگی۔۔۔


دونوں میں محبت شدت اختیار کر گئی ۔۔۔۔

ساحل نے وعدہ کیا میری جان ہم ضرور شادی کریں گے ۔۔چاہے کچھ بھی۔ہو جائے ۔۔

لیکن ابھی ساحل کوئی کام تو کرتا نہ تھا ۔۔۔

عشنا پیار سے بولی۔ ساحل ۔۔۔میری امی میرے لیئے رشتہ دیکھ رہی ہے ۔۔۔تم اب کچھ کرو۔۔اپنے گھر بات کرو ۔۔

ساحل مسکرا کر بولا تمہاری امی کو دیکھنے دو رشتہ میں کروں گا بات اپنی امی سے۔۔۔

عشنا۔۔۔میری جان۔۔۔۔جانتی ہو۔۔۔تم کو کھو کر ۔۔۔میں کسی خوفناک کھنڈر کی مانند ۔۔۔۔۔آسیب زدہ ہو جاوں ۔۔۔جس کو دیکھ کر لوگ ۔۔۔۔خوف کھائیں گے۔۔۔اور مجھے زمانہ عشق زدہ کہہ کر ۔۔۔فنا کر دے گا۔۔

عشنا۔۔۔۔میں اب تمہارے ساتھ رہنا چاہتا ہوں۔۔تمہارے جینا چاہتا ہوں اور تمہارے ساتھ مرنا ہے مجھے۔۔۔

عشنا ۔۔۔کی آنکھ سے آنسو۔۔۔چھلکا ۔۔۔

ساحل ۔۔۔۔تم۔کو کیا لگتا ہے ۔۔۔عشق کی آگ کیا تمہارے ہی سینے میں  جل رہی ہے ۔۔

یاد رکھنا ساحل ۔۔۔اگر تم نے مجھے نہ اپنایا۔۔نا ۔۔۔تو میں خود کو اتنا درد دوں گی اتنا درد دوں گی ۔۔۔کے تم میرے انجام پہ رونے لگے گو۔۔۔

ساحل مسکرایا ۔۔۔کیا کہہ رہی ہو پاگل بہکی بہکی باتیں  نہ کیا کرو۔۔۔۔

کبھی کبھی تو قسم سے مجھے تم سے ڈر لگتا یے۔۔۔

عشنا ہنسنے لگی۔۔۔۔

نہیں ساحل بات ڈر کی نہیں ہے۔۔۔محبت کی ہے ۔۔جو میں تم سے بے پناہ کرتی ہوں۔۔۔تمہارے خوابوں میں جینے لگی ہوں ۔۔تمہاری ہر بات میری سر انکھوں پہ ہے۔۔۔

تم کہو ۔۔عشنا ۔۔۔۔بازار کی طوائف بن جاو ۔۔تو بن جاوں گی ۔۔تم کہو ۔۔عشنا ۔۔۔میرے گھر کی عزت بن جاو تو بن جاوں گی۔۔۔لیکن شرط  یہ ہے تمہارا ہاتھ میرے ہاتھ میں ریے۔۔۔

میں نفسیاتی نہیں ہوں ساحل۔۔۔میں۔با وفا لڑکی ہوں۔۔۔

محبت عروج پہ۔۔۔تھی ۔۔ساحل نے اپنے گھر بات کی۔۔۔

چونکہ عشنا بہت پیاری تھی پڑھی لکھی بھی تھی ۔۔۔ساحل کے گھر والوں کو کوئی اعتراض نہ تھا ۔۔۔

کچھ دن گزرے۔۔۔ساحل کے امی ابو ۔۔۔عشنا کے گھر آئے عشنا کی ماں سے رشتے کی بات کی۔۔۔۔۔


تو ماں نے کہا۔۔۔۔آپ کا بیٹا کوئی کام دھندا کرتا نہیں۔۔

اور میں تو اپنی بیٹی کے لیے کوئی چار پیسے کمانے والا لڑکا ڈھونڈو گی۔۔۔۔

سو عشنا کی ماں نے صاف انکار کر دیا۔۔۔۔

جب ساحل کو پتہ چلا تو ۔۔۔۔تڑپنے لگا۔۔۔اب دل چاہ رہا تھا ۔۔عشنا کو بھگا کر لے جائے۔۔۔

لیکن۔۔۔گھر میں اپنی جوان بہن کی جانب دیکھتا اور خاموش ہو جاتا ۔۔۔

میں عشنا کو لے جاوں اور کوئی میری بہن کے ساتھ نہ ایسا کرے۔۔۔۔۔۔۔

اب دونوں۔۔۔۔رو رہے تھے ۔۔۔۔کیا کریں۔۔۔

ساحل نے ۔۔۔مسکرا کر کہا۔میری جان۔۔۔میں دبئی چلا جاتا ہوں۔۔۔تمہاری امی سے بات کر لیتے ہیں۔۔۔

دو سال میں خود کو سیٹل  کر لوں گا ۔۔۔عشنا کی امی سے بات کی تو۔۔۔فیصلہ یہ ہوا۔۔۔

ساحل دبئی چلا جائے ۔۔جب چار پیسے کمانے لگ جائے تو۔۔۔ہم۔دونوں کی شادی کر دیں ۔۔۔

ساحل کو گئے ابھی 8 ماہ ہوئے تھے ۔۔۔۔

ساحل کی وہاں کسی کے ساتھ لڑائی ہو گئی۔۔۔۔وہاں کی پولیس نے ۔۔۔۔ساحل کو جیل میں ڈال دیا۔۔۔

ادھر۔۔۔۔عشنا کی ماں کو ایک رشتہ کسی نے بتایا ۔۔لڑکا ۔۔۔پراپرٹی ڈیلر تھا ۔۔۔۔

اپنا گھر گاڑی  بنک بیلنس سب کچھ  ۔تھا ہاں بس عشنا سے کوئی دس سال بڑا تھا۔۔۔

ماں  نے اس رشتے کی بات چلائی۔۔۔

اس لڑکے کا نام ۔۔۔۔۔۔توحید تھا۔۔۔۔۔

توحید سے ملاقات ہوئی۔۔۔۔۔توحید نے بتایا۔۔۔اس کے ماں باپ نہیں  ہے ایک بہن ہے وہ بھی کراچی رہتی اپنے بچوں کے ساتھ ۔۔۔۔

توحید کا گھر دیکھا۔۔۔محل نما گھر تھا ادو عدد کاریں بھی کھڑی تھیں ۔۔۔

عشنا کی ماں کو توحید بہت پسند آیا۔۔۔۔

عشنا سے بات کی۔۔۔تو عشنا نے صاف انکار کر دیا۔۔۔۔

میں مر سکتی ہوں لیکن ساحل کے علاوہ کسی سے شادی نہیں کروں گی۔۔۔۔ ماں نے عشنا کو مجبور کیا شادی کے لیئے۔

عشنا کو اپنی قسم دی ۔۔۔توحید سے شادی کرو۔۔۔

عشنا روتی چیختی رہی۔۔۔۔ادھر ساحل کا نمبر بند تھا ۔۔

کیا کرتی۔۔۔۔۔کس کو بتاتی۔۔۔بھائئ جو پوچھتے نہ تھا ۔۔۔ماں نے سامنے کوئی بولتا نہ تھا ۔۔۔

ماں نے خودکشی کی کوشش کی اگر شادی نہ کی تم نے توحید سے تو میں خود کو آگ لگا کر جلا دوں گی ۔۔۔

عشنا بے بس ہو گئی۔۔۔۔

زبردستی۔۔۔۔توحید سے شادی کروا دی۔۔۔۔

چیخ چیخ کر رونے ہوئے ۔۔۔۔عشنا نے توحید کو قبول کیا۔۔۔۔

قیامت کیا ہوتی ہے کبھی اس سے پوچھنا۔۔۔۔جس کے دل میں تو کوئی اور دھڑکتا ہو۔۔۔

اور اس کا ہاتھ کسی اور کے ہاتھ۔ میں ہو۔۔

موت کیا ہوتی ہے اس سے پوچھنا۔۔۔۔

جس کے خوابوں میں کوئی اور جیتا ہو ۔۔۔اور جسم کا حقدار کوئی اور ہو۔۔۔۔

عشنا ۔۔۔۔توحید کے ساتھ وداع ہو گئی ۔۔۔۔

سچ تو یہ تھا ۔۔۔اب ساحل کے بنا عشنا نے جینا چھوڑ دیا تھا ۔۔۔

عشنا تھی تو خوبصورت ۔۔۔لیکن ۔۔اب خوبصورتی ماند پڑنے لگی تھی۔۔۔

کیوں کے اسے لگتا تھا ساحل جان بوجھ کر ۔۔۔اسے چھوڑ گیا تھا ۔۔۔۔نہ کوئی فون نہ کوئی کال ساحل کے گھر والے بھی کچھ نہیں جانتے تھے۔۔۔۔

توحید۔۔۔۔نے آہستہ سے کہا ۔۔۔عشنا ۔۔۔اب میری بیوی ہو تم ۔۔


میں تمہارے بارے سب جانتا  ہوں ۔۔تم کسی سے پیار کرتی تھئ۔۔۔

بھول جاو اب اسے ۔۔۔اور ۔مکمل میری ہو کر رہو۔۔۔

عشنا ۔۔۔کانپتی آواز میں بولی۔۔۔میں اس شادی کو شادی نہیں مانتی۔۔۔۔

یہ سودا کیا ہے تم نے میری ماں کے ساتھ۔۔ 

توحید پیار سے بولا ۔۔۔عشنا ۔۔۔۔میں بحث نہیں کرنا چاہتا۔۔۔نہ تو کسی نے کوئی سودا کیا ہے نہ کوئی زبردستی ہوئی یے ۔۔۔

یہ دیکھو یہ گھر تمہارا ہے تم اس کی مالکن ہو ۔۔۔میرا سب کچھ اب دے تمہارا ہے ۔۔۔

عشنا روتے ہوئے بولی۔۔توحید۔۔۔۔مجھے طلاق دے دو میں تمہارے ساتھ نہیں رہنا چاہتی۔۔۔

اس بار توحید کو غصہ آیا ۔۔اس نے عشنا کے منہ پہ تھپڑ مار دیا۔۔۔کتے کی طرح بھونکنا بند کرو ۔۔۔

آج کے بعد میں تمہارے منہ سے ایسی کوئی بکواس نہ سنوں ۔۔

عشنا رونے لگی ۔۔۔میری امی نے بہت غلط کیا میرے ساتھ۔۔۔

مجھے زندہ لاش بنا دیا یے ۔۔۔

تھوڑی دیر بعد ۔۔۔توحید پاس آیا۔۔۔۔

عشنا سوری میری جان ۔۔۔غصے میں ہاتھ اٹھ گیا تھا۔۔۔۔

عشنا آنسو صاف کیئے کروٹ بدل کر لیٹ گئی ۔۔۔

دن گزرنے لگے۔۔۔۔ساحل دبی میں جیل سے رہا ہو  گیا جب اسے پتہ چلا ۔۔۔عشنا کی شادی ہو گئی ہے تو ۔۔۔وہ پاکستان  آیا۔۔۔۔اس نے کافی تماشہ کیا۔۔۔۔عشنا کی ماں کے ساتھ۔۔۔۔لیکن اب کیا کیا جا سکتا تھا ۔۔۔ساحل کے ماں باپ نے سمجھایا ۔۔بیٹا۔۔۔اب جو ہونا تھا ہو گیا ہے ۔۔۔

ہر کام میں اللہ پاک کی بہتری ہوتی ہے۔۔۔

ساحل کی شادی بھی ہو گئی کسی اور کے ساتھ ۔۔۔۔

اب وقت گزرنے لگا تھا ۔۔۔۔

عشنا خاموش ہو گئی تھی۔۔۔اس نے توحید کو قبول کر لیا تھا ۔۔۔۔

اب وہاں ایک لڑکا ۔۔۔۔توحید کا ہمسایہ ۔۔۔۔وہ عشنا پہ عاشق ہو گیا تھا ۔۔۔۔

وہ عشنا کو باتوں ہی باتوں میں۔۔اپنی عاشقی کا اظہار کر کرتا تھا ۔۔۔

وہ عشنا سے ہمدردی کرتا ۔۔۔

عشنا سے محبت بھری باتیں کرتا۔۔۔عشنا سمجھتی تھی کے وہ لڑکا۔۔۔عادل ۔۔۔کس نظر سے اس سے بات کرتا ہے ۔۔لیکن خاموش رہتی ۔۔۔۔

توحید ہر ۔۔۔روز عشنا کو ڈنر کروانے باہر لے کر جاتا ۔۔۔وہ بڑے بڑے ہوٹل میں  لے کر جاتا۔۔۔۔۔کینڈل نائٹ ڈنر کیا کرتے تھے۔۔۔

توحید نے اپنا اے ٹی ایم کارڈ ۔۔عشنا کے ہاتھ پہ رکھا ۔۔۔اور کہا میری جان ۔۔۔۔جو دل چاہتا ہے خریدو ۔۔۔جو دل۔کرتا کھاو پیو۔۔۔سب پیسہ تمہارا ہے۔۔۔۔۔

عشنا ۔۔خاموش رہتی۔۔۔۔

عشنا کو ایک دن ساحل کی بہت یاد آ رہی تھی ۔۔۔۔عشنا نے اس لڑکے کو اپنی ساری بات بتائی جو نا کا ہمسایہ تھا اور عشنا کو چاہنے لگا تھا عادل۔۔۔۔

عادل سے کہنے لگی ۔۔۔مجھے کسی طرح سے ۔۔۔ساحل کا نمبر لا دو ۔۔

عادل مسکرا کر بولا ۔۔۔۔عشنا لا دوں گا۔۔۔مجھے بتاو ۔۔۔ساحل کا گھر کہاں ہے۔۔۔

عادل کو ڈریس دیا۔۔۔

عادل بھی ٹھہرا عاشق ۔۔۔اس نےسر توڑ کوشش کی ۔۔۔۔اور آخر ساحل کا نمبر ڈھونڈ نکالا ۔۔۔۔

عشنا کو لا کر دیا۔۔۔۔

عشنا گھر میں اکیلی رہتی تھی ۔۔چونکہ۔۔۔توحید کے بقول توحید کے ماں باپ نہیں تھے ۔۔۔۔

عادل۔۔۔پاس بیٹھا تھا ۔۔۔عشنا سے کہنے لگا ۔۔۔آپ کا ساحل تو دبئی رہتا ہے۔۔وہ اپنی بیوی بچوں کو بھی ساتھ لے گئا ہے۔۔۔یہ اس کا نمبر مشکل سے ملا ہے۔۔۔

عشنا نے تھینکس ادا کیا۔۔۔

عادل نے آہستہ سے کہا عشنا ایک بات پوچھوں ۔۔ ۔

عشنا نے ہاں میں سر ہلایا۔۔۔

عادل پیار سے بولا۔۔۔آپ کا شوہر توحید ۔۔ہر روز آپ کو ڈنر کے لیئے لے کر جاتا یے ۔۔۔پھر آپ دیر رات واپس آتے ہیں۔۔۔تو آپ گھر میں کھانا بنا لیا کریں نا۔۔۔۔

کیا آپ کو کھانا بنانا نہیں آتا ۔۔۔

عشنا ۔۔۔کی انکھوں سے نہ جانے کیوں آنسو چھلک آئے تھے ۔۔۔

آہستہ سے بولی۔۔۔۔عادل ۔۔۔کچھ سوالات کے جواب ہوتے ہوئے بھی۔۔۔۔لاجواب ہوتے ہیں ۔۔۔

اتنا کہہ کر عشنا نے کہا اب تم۔جاو توحید آتا ہو گا۔۔۔

توحید گھر آیا۔۔۔


عشنا ۔۔۔میری جان ۔ابھی تک ریڈی نہیں ہوئی کیا۔۔۔

عشنا آہستہ سے بولی توحید اج میرا دل نہیں ہے باہر جانے کا۔۔۔

توحید۔۔مسکرا کر بولا۔۔۔کیوں میری جان ۔۔

عشنا کانپتی آواز میں بولی۔۔۔۔تھک گئی ہوں میں نہ جانے کیوں ۔۔۔

توحید ۔۔۔میں آپ کے ساتھ ۔۔پچھلے 4 سال سے رہی ہوں۔۔

کیا آپ مجھے اب بگئ طلاق دے سکتے ہیں۔۔۔

توحید غصے سے بولا بکواس نہ کرو۔۔۔

توحید اتنا کہہ کر گھر سے باہر چلا گیا۔۔۔۔۔۔

عشنا نے ساحل کا نمبر ڈائل کیا۔۔۔

ساحل نے نے دیکھا پاکستان کا نمبر ہے۔۔۔

فون کان کے ساتھ لگایا۔۔۔ہیلو۔۔۔۔

دوسری جانب سے آواز آئی جس میں نہ جانے کتنا درد تھا ۔۔۔

ہیلو ۔۔۔۔

ساحل عشنا کی آواز  سنتے کی تڑپنے لگا۔۔۔۔

ساحل خاموش ہو گیا۔۔۔

خود کو سنبھالا ۔۔۔

عشنا روتے ہوئے بولی ۔۔۔

ساحل کیا دو منٹ بات کر سکتی ہوں ۔۔ساحل نے پیار سے بولا ہاں عشنا ۔۔۔

بتاو کیسی ہو۔۔۔۔

عشنا رونے لگی۔۔۔ساحل میں ٹھیک نہیں  ہوں ۔۔

ساحل نے پوچھا کیا ہوا ہے۔۔۔

عشنا چیخ کر رونے لگی۔۔۔میں بکھر چکی ہوں۔۔۔

ساحل ۔۔۔مجھے پہ ظلم ڈھائے جا رہے ہیں۔۔۔مجھے بچا لو آ کر ۔۔۔

ساحل۔۔۔میں کیسے بتاوں ۔۔میں کس ۔۔درد سے گزر رہی ہوں ۔۔

ساحل حوصلہ دییتے ہوئے بولا۔۔۔۔عشنا ۔۔مجھے بتاو کیا ہوا یے۔۔

اتنے میں توحید دروازے پہ کھڑا سن رہا تھا باتیں عشنا کی ۔۔جلدی سے دروازہ کھولا ۔۔۔عشنا کے ہاتھ سے موبائل ہکڑا۔۔۔اور دیوار کے ساتھ دے مارا۔۔۔

کتی کمینی ۔۔۔کس عاشق سے بات کر رہی ہو۔۔۔

توحید نے عشنا کو ۔۔3۔۔۔چار تھپڑ مار دیے ۔۔

عشنا ۔۔۔اب بس ۔۔۔توحید سے جان چھڑانا چاہتے تھئ لیکن کس قیمت پہ۔۔۔

نہ ماں بات سننے کے لیئے تیار تھئ نہ بھائی۔۔۔

عشنا ۔۔۔نے پھر ایک سخت فیصلہ کیا۔۔۔

عادل کو فون کیا۔۔۔جو پیار کرتا تھا عشنا سے۔۔۔

اسے کہا عادل ایک آخری کام کرو گے میرے لیئے ۔۔۔

عادل نے عاشقانہ انداز میں کہا۔۔ہاں بولا عشنا ۔۔۔

عادل کیا مجے چوہے مارنے والی دوا لا کر دے سکتے ہو۔۔

عادل چونک گئا۔۔۔عشنا کیا کہہ رہی اپ۔۔

عشنا نے قسم دی ۔۔مجھ سے پیار کرتے ہو تو لا دو۔۔

عادل ۔۔۔دوسرے دن چوہے مارنے والی دوا لا کر دے دی۔۔۔

۔عشنا نے شام کو۔۔۔ڈنر پہ جانے سے پہلے ۔۔۔چائے میں ملائی۔۔۔اور اپنے شوہر  توحید کو پلا دی۔۔۔

چند منٹ 

 گزرے توحید تڑپنے لگا ۔۔۔زمین پہ گر گیا۔۔۔۔

عشنا نے کلہاڑی اٹھائی۔۔۔اور ۔۔۔توحید کے سر پہ اٹھا وار کیئے کے ۔۔۔سر تن سے جدا کر دیا۔۔۔

اتنے میں عادل گھر ایا ۔۔۔دیکھا ۔۔۔توحید زمین پہ پڑا خون دے لے پت۔۔۔عشنا پاس بیٹھی رو رہی تھی۔۔۔

عادل یہ منظر دیکھ کر بھاگ نکلا۔۔۔۔

عشنا چیخ چیخ کر رونے لگی۔۔۔

جب عشنا بھی وہاں سے بھاگنے لگی تو ۔۔۔محلے والوں نے دیکھا عشنا کے کپڑے خون سے لت پت ہیں 

عشنا کو پکڑ لیا۔۔۔پھر 

۔۔۔راز کھلا۔۔۔۔۔عشنا نے اپنے شوہر کو قتل کر دیا ہے ۔۔۔پولیس کو کال کی ۔۔۔۔

عشنا کو ہتھکڑیاں لگا دی گئیں ۔۔

عشنا خاموش تھی ۔۔۔۔بہت بے رحمی سے قتل کیا تھا عشنا نے ۔۔۔

سب لوگ عشنا پہ تھوکنے لگے ۔۔۔عورت کے نام پہ دھبہ ہو۔۔

کچھ کہنے لگے اس کو سنگسار کر دو۔۔۔کچھ نے کہا اس ظالم عورت کو چوراہے پہ سولی چڑھا دو۔۔۔

کر کسی نے گالی دی عشنا کو۔۔۔

تھانے لے گئے۔۔۔

عشنا  نے اپنا جرم۔قبول کر لیا۔۔۔

پھر ایک نیوز چینل کا رپورٹر ایا۔۔۔۔

اس نے مائیک پکڑا۔۔۔عشنا سے پوچھا۔۔۔

کتنی بدبخت لڑکی ہو تم ۔۔۔اپنا حسن دیکھو اور اپنا ظلم دیکھو۔۔۔۔

سنا ہے تمہارا ایک عاشق دبئی میں ہے اور ایک ہمسائہ  تھا عادل اس کے ساتھ بھی غلط تعلقات تھے تمہارے۔۔۔کتنی گندی عورت ہو تم۔۔۔

کیوں قتل کیا اپنے شوہر کا۔۔۔

عشنا آہستہ سے بولی۔۔۔۔بس ۔۔میں اس کے ساتھ نہیں رہنا چاہتی تھی۔۔

صحافی نے پوچھا تو طلاق لے لیتی۔۔۔

عشنا دھیمے لہجے میں بولی ۔۔نہیں دیتا تھا طلاق  ۔۔

صحافی چلا کر بولا۔۔۔۔کیا تم۔کو شرم نہیں ہے اہنے عاشقوں کے لیئے تم نے اپنی شوہر کو قتل کر دیا۔۔۔

عشنا ۔۔۔خاموش ہو گئی۔۔۔اور کہنے لگی میں بدکردار عورت نہیں ہوں میرا اللہ جانتا ہے میں کیا ہوں ۔۔۔

صحافی نے کافی برا بھلا کہا عشنا کو ۔۔۔

پھر کہنے لگا ۔۔۔تم۔کو پتہ ہے تم کو سزائے موت ہو گی۔۔۔

اس بار۔۔۔۔عشنا مسکرانے لگی ۔۔الحمدللہ۔۔۔

جیسے چہرے پہ ایک سکون آ گیا ہو۔۔۔۔۔

ہر دیکھنے سننے والا۔۔۔عشنا کو گالیاں دے رہا تھا ۔۔۔

اور پھر۔۔۔عدالت نے عشنا کو عمر قید کی سزا سنائی ۔۔۔

میں فارس ۔۔۔۔اس لڑکی کی ویڈیو دیکھ رہا تھا ۔۔مجھے اس کی ابکھوں میں ایک درد دکھائی دے رہا تھا۔۔۔میرا دل نہیں مان رہا تھا یہ لڑکی ۔۔۔بدکردار ہو گی۔۔۔

ضرور کچھ نہ کچھ ایسا ہے جو اس نے اپنے دل میں چھپا رکھا ہے ۔۔۔

میں بے ہر ممکن کوشش کی اسے تلاش کروں وہ کس جیل میں ہے ۔۔میں نے اس کی ساری ڈیٹیل  لی۔۔۔۔

بلاخر ۔۔دو ماہ بعد مجھے اس کا ایڈریس مل گیا۔۔۔میں جیل جا پہنچا۔۔۔۔

پولیس والوں کو اپنا تعارف دیا۔۔۔

اور صرف 20 منٹ کے لیئے اس لڑکی سے ملنا چاہا۔۔۔

پہلے تو عشنا ۔۔۔ملنا نہیں چاہتی تھی۔۔۔پھر۔۔بہت کوشش کے بعد اس نے ہاں کی ۔۔میں جب جیل میں گیا دیکھا۔۔نورانی چہرہ معصوم سی لڑکی ۔۔نازک سی ۔۔۔

مصلی پہ بیٹھی عصر کی نماز پڑھ رہی تھی۔۔۔میں انتظار کرنے لگا۔۔۔جب نماز سے فارغ ہوئی ۔۔۔تو اسے ملاقات روم میں لایا گیا۔۔۔اس کو ہتھکڑیاں لگی ہوئی تھیں۔۔میں نے پولیس والے سے کہا۔۔۔اس کی ہتھکڑی  کھول دیں۔۔۔

عشنا مجے دیکھ رہی تھی۔۔پھر آہستہ سے بولی۔۔۔آپ کون ۔۔میں نے کرسی پہ بیٹھنے کا کہا۔۔۔

پھر عشنا خے سر پہ پیار سے ہاتھ پھیرا اور بتایا میں فارس ہوں ۔۔۔

اسے اپنے بارے سب بتایا۔۔۔

عشنا ۔کی آنکھوں  میں دیکھنے ہوئے ۔۔پوچھا ۔۔۔عشنا میرا دل نہیں مانتا ۔۔۔تم بدکردار لڑکی ہو۔۔۔

مجھے وہ راز بتاو ۔۔۔جو دل۔میں چھپائے۔۔۔۔جی رہی ہو۔۔عشنا کی آنکھوں سے آنسوں چھلک گئے۔۔۔آہستہ سے بولی فارس بھائئ ۔۔۔آپ کیا کریں گے جان کر۔۔۔میں نے پیار سے کہا۔۔۔۔فارس شاید کسی اور کی زندگی بچا سکے۔۔۔

عشنا ۔۔۔۔زور زور سے رونے لگی  ۔۔۔پولیس کانسٹیبل بھی پاس کھڑی تھی وہ شاید اس سے ڈر رہی تھی۔۔۔

میں  ے پولیس لیڈی کانسٹیبل کو باہرجانے کہ ریکوسٹ کی ۔۔

عشنا ۔۔۔۔روتے ہوئے بولی۔۔میں توحید سے شادی نہیں کرنا چاہتی تھی لیکن میری ماں نے زبردستی شادی کر دی تھی۔۔۔

میں بہت اچھا جینا چایتئ تھی ۔۔لیکن۔۔۔شادی کے دس دن بعد مجھے پتا چلا۔۔توحید اچھا انسان  نہیں ہے ۔۔۔وہ لڑکیوں سے جسم فروشی کرواتا تھا۔۔۔وہ دلال تھا۔۔۔

وہ مجھے ہر شام ڈنر کے نام پہ لے جاتا ۔۔۔اور مجھ سے بھی جسم فروشی کرواتا تھا ۔۔۔مجھے کہتا تھا لوگون کے ساتھ ہیسوں بارے ڈھیل کیا کرو۔۔میں نے کتنی بار وہاں سے بھاگنا چاہا لیکن اس کے ہاتھ بہت دور تک پھیلے ہوئے تھے ۔۔وہ مجھے قتل کر دیتا۔۔۔

اس نے میری طرح بہت سی لڑکیوں  کو اہنے جال میں پھنسایا ہوا تھا ۔۔۔

میں اس دلدل سے نکلنا چاہتی تھی۔۔لیکن ۔۔۔۔میں بے بس تھی۔۔۔

توحید۔۔۔مجھے 50 لاکھ میں کسی کو بیچنے والا تھا ۔۔۔میں کیا کرتی مجھے کوئی راستہ دکھائی نہیں دے رہا تھا ۔۔۔

مجھے مجبور ہو کر یہ قدم اٹھانا پڑا۔۔نہ ماں نے میری خبر لی نہ بھائیوں نے ۔۔۔

اور میں کرمنل بن گئی۔۔۔

میں قاتل بن گئی ۔۔۔فارس بھائی۔۔۔۔میاں بیوی کا رشتہ بہت پاکیزہ رشتہ ہوتا ہے۔۔۔کس پہ یقین کیا جائے اب ۔۔کون سے رشتے پہ۔۔خون سفید ہو چکے ہیں اور لوگ درندے ۔۔

میری ماں کے ایک غلط فیصلے نے مجھے عمر قید کی مجرمہ بنا دیا۔۔۔

میں کسے غلط کہوں اور کسے اچھا۔۔۔

اتنے میں ملاقات کا ٹائم ختم ہوا۔۔۔میں معصوم سے چہرے کی جانب دیکھنے لگا۔۔۔

وہ بیچاری عشنا ۔۔۔بے گناہ فنا کر دی گئی۔

میاں بیوی کا رشتہ انمول ہوتا ہے ۔۔۔اب یہ بھی درندہ بن گئا ۔۔

کس پہ یقین کریں کس پہ بھروسہ ۔۔کس کو اپنا کہیں کس کو اپنی عزت کا محافظ سمجھیں۔۔بہت سے توحید جو مرد بن کر ۔۔۔۔نہ جانے کتنی عشنا کو فنا کر رہے ہیں۔۔۔خدا جانے ۔۔۔

میں تو اتنا کہوں ۔۔۔ماں باپ سوچ سمجھ کر فیصلہ کری۔۔

فارس سب مردوں یا میاں بیوی کے رشتے کو غلط نہیں کہہ رہا۔۔لیکن۔۔۔ایک حقیقت جو آج کے زمانے میں ہے وہ بیان کی ہے۔۔۔یہ کوئی افسانہ نہیں بلکل حقیقت ہے ۔۔۔

اپنی بیٹیوں کو حق کے لیئے  لڑنا سکھائیں ان کی ہمت بنیں۔۔ان کی طاقت بنیں صرف شادی کر کے یہ نہ سوچ لیا کریں ذمہ داری پوری ہو گئی ہے۔۔۔۔

وقت بہت نازک چل رہا ہے ۔۔۔ہر لڑکی ۔۔۔کو فارس اتنا کہے گا۔۔۔محبت سے دور رہیں۔۔۔نہ جانے کون سانپ بن کر ڈس جائے ۔۔اس تحریر کا مقصد ۔۔۔کسی رشتے یا کسی کا دل دکھانا نہیں یے ۔۔بس اصلاح کرنا ہے ۔۔۔




Post a Comment

0 Comments